زیادہ چائے پینے کے کچھ نقصانات بھی ہیں

1,678

بلا شبہ ہم یہ کہ سکتے ہیں کہ پاکستان کا قومی مشروب چائے ہے۔پاکستان میں چائے کی مقبولیت سے انکار ممکن نہیں اور یہ مشروب دنیا کے بیشتر حصوں میںبہت پسند کیا جاتا ہے۔مختلف تحقیقی رپورٹس میں چائے نوشی کی عادات کے فوائد کا ذکر ہوا ہے جیسے قبل از وقت دماغی تنزلی سے تحفظ، مخصوص اقسام کے کینسر، فالج، امراض قلب اور ذیابیطس کے خطرے میں کمی وغیرہ۔ لیکن کسی بھی چیز کا زیادہ استعمال ہمیشہ خطرناک ہوتا ہےاسی طرح اس مشروب کا زیادہ استعمال صحت کے لیے نقصان دہ بھی ہوسکتا ہے اور اس مشروب کو اعتدال میں رہ کر ہی پینا زیادہ بہتر ہوتا ہے۔

ذہنی بے چینی

کیفین کو مزاج پر اثر انداز ہونے والی مقبول ڈرگ بھی مانا جاتا ہے جو مثبت کے ساتھ جسم پر منفی اثرات بھی مرتب کرسکتی ہے، بہت زیادہ چائے پینا نیند کی کمی، ذہنی بے چینی اور دل کی دھڑکن کی رفتار بڑھانے کا امکان پیدا کرتی ہے۔

نیند کے مسائل

چائے میں موجود کیفین پیشاب زیادہ آنے کا باعث بنتی ہے خاص طورپر اگر بہت زیادہ پی جائے تو، اسی طرح یہ نیند اڑانے یا دیگر مسائل کا خطرہ بھی پیدا کرتی ہے۔


وہ علامات جو سنگین امراض کی نشاندہی کرتے ہیں


قبض

چائے میں موجود ایک کیمیکل Theophylline غذا کے ہضم ہونے کے عمل کے دوران ڈی ہائیڈریشن کا باعث بن سکتا ہے جو کہ قبض کا مسئلہ پیدا کرتا ہے۔ ویسے تو چائے کو آنتوں کی حرکت یا قبض سے بچاؤ کے لیے فائدہ مند بھی مانا جاتا ہے مگر اس کی زیادہ مقدارقبض کا شکار بنانے کے لیے کافی ہوتی ہے۔

خون کی شریانوں کے مسائل

چائے میں موجود کیفین خون کی شریانوں کے نظام کے لیے کچھ زیادہ اچھی نہیں ہوتی اور اسے بہت زیادہ مقدار میں جسم کا حصہ بنانا دل کے امراض کا باعث بن سکتا ہے۔

مثانے کے کینسر کا خطرہ

یہ بہت زیادہ چائے پینے کا سب سے بڑا نقصان ہے، ایک تحقیق کے مطابق جو مرد بہت زیادہ چائے پیتے ہیں، ان میں مثانے کے کینسر کا خطرہ دیگر کے مقابلے میں زیادہ ہوتا ہے۔


نوٹ : یہ معلومات قارئین کی دلچسپی کو مدنظر رکھتے ہوئےپیش کیا جارہا ہے،اس بارے میں اپنےمعالج سے ضرور مشورہ کیجئے۔

بلڈ شوگر میں کمی یا اضافےکی علامات اور اقدامات


شاید آپ یہ بھی پسند کریں
تبصرے
Loading...