alternative medicine – ایچ ٹی وی اردو https://htv.com.pk/ur Tue, 22 Mar 2022 08:05:05 +0000 en-US hourly 1 https://htv.com.pk/ur/wp-content/uploads/2017/10/cropped-logo-2-32x32.png alternative medicine – ایچ ٹی وی اردو https://htv.com.pk/ur 32 32 نوزائیدہ بچوں میں یرقان : اسباب و علاج https://htv.com.pk/ur/homeopathy/newborn-jaundice Fri, 22 Mar 2019 10:09:12 +0000 https://htv.com.pk/ur/?p=30916 newborn jaundice

انسان کی پیدائش قدرت کی طرف سے ایک قدرتی عمل ہے اور یہ عمل تا قیامت جاری و ساری رہے گا۔آج سے 500 ،600 سال پہلے جب میڈیکل سائنس نے اتنی ترقی نہیں کی تھی تو اس وقت بھی بچے بنا کسی مسائل کے پیدا ہوتے تھے کیونکہ یہ کوئی بیماری نہیں بلکہ ایک فطری […]

The post نوزائیدہ بچوں میں یرقان : اسباب و علاج appeared first on ایچ ٹی وی اردو.

]]>
newborn jaundice

انسان کی پیدائش قدرت کی طرف سے ایک قدرتی عمل ہے اور یہ عمل تا قیامت جاری و ساری رہے گا۔آج سے 500 ،600 سال پہلے جب میڈیکل سائنس نے اتنی ترقی نہیں کی تھی تو اس وقت بھی بچے بنا کسی مسائل کے پیدا ہوتے تھے کیونکہ یہ کوئی بیماری نہیں بلکہ ایک فطری عمل ہے ۔

موجودہ دور کا اگر گزشتہ ادوار سے موازنہ کریں تو اس دور میں علمی معیار گزشتہ دور سے کافی بلند ہے لیکن اس کے باوجود کہ جب کوئی عورت حاملہ ہوجاتی ہے تو میڈیا اور مافیا کی گئی برین واشنگ کے نتیجے میں خاندان اور گھر والے ایسا ظاہر کرتے ہیں کہ جیسے عورت کا کوئی خطرناک مرض لاحق ہوگیا ہے اور ایک منٹ بھی ضائع کیے بغیر لیڈی ڈاکٹر کی طرف دوڑ لگائی جاتی ہے میاں بیوی بھی اس معاملے کو لے کر کافی حساس ہوجاتے ہیں کہ جیسے یہ کوئی موذی بیماری ہو۔

اسباب :

جب حاملہ عورت کا کیس کسی ڈاکٹر کے پاس جاتا ہے تو وہ سب سے پہلے اس کا رجسٹریشن کرلیتی ہے۔ پھر اس کے الٹرا ساونڈ اور بلڈ ٹیسٹ کرائے جاتے ہیں اور ڈیلیوری ہونے تک کئی بار الٹرا ساونڈ کرایا جاتا ہے جس سے ماں اور بچے کی صحت پر برُے اثرات مرتب ہوتے ہیں۔ اس کے علاوہ بغیر کسی جسمانی ضرورت کے حاملہ کو زبردستی ملٹی وٹامن اور طاقت کی ادویات کھلائی جاتی ہیں اور یہ ادویات مسلسل وہ 9 ماہ تک کھاتی رہتی ہے۔ اکثر حاملہ عورتوں کو ان ادویات کی ضرورت نہیں ہوتی ہے لہذا ان ادویات کے مضر اثرات شکم میں موجود بچے کے جگر پر آنا شروع ہوجاتے ہیں ۔ حاملہ عورت بھی ان ادویات کے بھاری اور گرم اثرات کا شکار ہوجاتی ہے۔ پھر جب بچےکی پیدائش ہوتی ہے تو پیدائشی طور پر یرقان میں مبتلا ہوجاتا ہے۔

پھر یرقان کے نام سےنومولود بچے کا علاج شروع ہوجاتا ہے اور بچے کی صحت دواوٌں سے مزید خراب ہوجاتی ہے جو مستقبل میں کسی کمزوری یا بیماری کی شکل میں سامنے آتی ہےجب کہ اسباب پر کوئی غور نہیں کرتااور یہ عمل ھمارے معاشرے میں رواج پاچکا ہے ۔ گزشتہ سالوں میں کئی واقعات ایسے پیش آئے ہیں جن میں ٹریفک جام کی وجہ سے ماں نے اپنے بچے کو ایک سڑک پر جنم دیا اور بچہ اور ماں دونوں کو کوئی نقصان نہ پہنچا اسی طرح پرانے زمانے میں بھی بچے گھروں پر ہی پیدا ہوتے تھے اور اس طرح کے کوئی جدید آلات نہیں ہوتے تھے کیونکہ یہ ایک فطری عمل ہے ۔

علاج :

china-6: اس دوا کا ایک قطرہ آب مقطر میں ملا کر چند قطرے بچے کے منہ میں ٹپکائیں ۔ اس دوا کا استعمال ایک دن میں تین بار کیا جائے اور کم از کم ایک ماہ تک بچے کو پلائے۔
chelidonium: جب بچے کی آنکھیں اور ناخن پیلے ذرد ہوجائیں ، دودھ پلانے پر متلی ہوتی ہو تو اس دوا کو بھی درج بالا طریقے سے استعمال کریں ۔
bryonia: بچے کو ہلکا بخار، بے چینی ،دودھ ہضم کرنے کی صلاحیت میں مشکلات ،پیٹ درد کی شکایت ہو تو یہ دوا بھی درج بالا طریقے سے استعمال کریں ۔
lycopodium: پیدائشی یرقان کے لئے یہ دوا بہت فائدہ مند ہے اگر بچہ ماں کا دود ھ پی رہا ہے تو یہ دوا صرف ماں کوبھی پلائی جاسکتی ہے اور بچہ استعمال نہ بھی کریں تو فائدہ پہنچے گا۔

The post نوزائیدہ بچوں میں یرقان : اسباب و علاج appeared first on ایچ ٹی وی اردو.

]]>
اکوپنکچر ٹریٹمنٹ 6 طرح سے صحت کو بہتر بنائے https://htv.com.pk/ur/alternative-medicine/acupuncture-treatment-in-urdu Mon, 24 Dec 2018 06:56:45 +0000 https://htv.com.pk/ur/?p=29257 Acupuncture 24-12-18

موجودہ تیز رفتار زندگی میں اکثر لوگوں کو گھٹنوں اور جوڑوں کے درد کی شکایت ہوتی ہے۔ زیادہ تر لوگ اس درد سے نجات حاصل کرنے کے لیے تیز دوائوں کا استعمال کرتے ہیں، جبکہ کم نقصان دہ اور دوائوں کے بغیر علاج کو ہم اکثر نظر انداز کردیتے ہیں۔ ان طریقوں میں ایک طریقہ […]

The post اکوپنکچر ٹریٹمنٹ 6 طرح سے صحت کو بہتر بنائے appeared first on ایچ ٹی وی اردو.

]]>
Acupuncture 24-12-18

موجودہ تیز رفتار زندگی میں اکثر لوگوں کو گھٹنوں اور جوڑوں کے درد کی شکایت ہوتی ہے۔ زیادہ تر لوگ اس درد سے نجات حاصل کرنے کے لیے تیز دوائوں کا استعمال کرتے ہیں، جبکہ کم نقصان دہ اور دوائوں کے بغیر علاج کو ہم اکثر نظر انداز کردیتے ہیں۔ ان طریقوں میں ایک طریقہ اکوپنکچر ہے۔ اکوپنکچر چینیوں کا روایتی طریقہ علاج ہے جس میں وہ درد اور دبائو کو کم کرنے کے لیے سوئیوں کے ذریعے علاج کرتے تھے ۔ اس میں مخصوص نروز پوائنٹس پر سوئیاں گھسائی جاتی ہیں ۔ اکوپنکچر کے فوائد میں سے ایک فائدہ یہ ہے کہ اس میں درد نہیں ہوتا۔ یہ طریقہ نروز کے کھنچائو اور دبائو سے متعلق علامات کو ختم کرنے کے لیے استعمال کیا جاتا ہے۔
اکوپنکچر کے کچھ طریقوں کے ذریعے صحت کو بہتر بنانے میں مدد مل سکتی ہے۔

میگرین اور سر درد کے علاج کے لیے :

اکوپنکچر کے ذریعے میگرین کا مکمل طور پر علاج تو نہیں کیا جاسکتا لیکن اس کی شدت کو کم ضرور کیا جاسکتا ہے۔ یہ ذہنی دبائو کی وجہ سے ہونے والے سر درد اور کھنچائو میں بھی آرام پہنچاتا ہے۔ سر درد اور ذہنی دبائو کم کر کے جسم کو سکون پہنچانے کے لیے بھی اکوپنکچر بہترین ٹریٹمنٹ مانا جاتا ہے۔

دوران حمل:

 

جسمانی کھنچاؤ اور لیبر پین کو کم کرنے کے لیے بھی اکوپنکچر کو مانا جاتا ہے ۔ اکوپنکچر ٹریٹمنٹ کے ذریعے ہارمونز کو متوازن کیا جاتا ہے نئی حاملہ خواتین میں بھی ڈپریشن اور موڈ کے علاج کے لیے اکوپنکچر ٹریٹمنٹ کیا جاسکتا ہے لیکن دوران حمل جسم کے کچھ حصوں پر اکوپنکچر کرنے سے گریز کرنا چاہیے اور اس کے لیے کسی ماہر اکوپنکچرسٹ کا انتخاب کیا جائے ساتھ ہی گائنی کولوجسٹ سے بھی مشورہ ضروری ہے۔

درد کی شدت کو کم کرتا ہے:

انسانی جسم کی مخصوص جگہوں پر سوئیاں گھسا کر کمر اور گردن کا درد کم کرنے میں مدد ملتی ہے۔ گٹھیا کے علاج میں بھی اکوپنکچر ٹریٹمنٹ کیا جاسکتا ہے۔ 2006 ءمیں کی گئی ایک تحقیق کے مطابق کمر کے نچلے حصے میں ہونے والے درد کا بھی اکوپنکچر کے ذریعے علاج کافی مفید ہے۔

مزید جانئے :کیا ایکوپنکچر کے ذریعے وزن کم کیا جا سکتا ہے؟

کیموتھراپی کے بعد :

کیموتھراپی کینسر کے سیلز کو ختم کرنے کے لیے کی جاتی ہے اور اس کے لاتعداد سائیڈ افیکٹس ہوتے ہیں۔ ان کے منفی اثرات کے علاج کے لیے بھی اکوپنکچر ٹریٹمنٹ کے ذریعے جسم کی توانائی واپس لائی جاسکتی ہے۔ اس سے جسم کی قوت مدافعت بڑھتی ہے جس سے مریض کو اس عرصے میں کم تکلیف ہوتی ہے۔

بے خوابی کا علاج:

اگر آپ کو نیند آنے میں مسئلہ ہوتا ہے اور نیند پوری نہ ہونے کی وجہ سے تھکن محسوس کرتے ہیں تو اکوپنکچر ٹریٹمنٹ کرواسکتے ہیں۔ تحقیق سے ثابت ہوا ہے کہ وہ لوگ جو باقاعدگی کے ساتھ اکوپنکچر تھیراپی کرواتے رہتے ہیں ان کی نیند کا معیار بہت بہتر ہوتا ہے اور انھیں آسانی سے نیند آجاتی ہے۔ اکوپنکچر کا ایک اضافی فائدہ یہ ہے بھی ہے کہ کیونکہ اس میں کوئی دوا استعمال نہیں ہوتی اس لیے اس کا کوئی سائیڈافیکٹ بھی نہیں ہوتا۔

اعصابی بیماری کا علاج:

عمر بڑھنے کے ساتھ ساتھ اعصاب کی کمزوری میںاضافہ ہوتا جاتا ہے لیکن اکوپنکچر کے ذریعے اعصاب کا دماغ سے تعلق قائم کیا جاتا ہے جس سے بیماری کے اثرات کافی حد تک کم کیے جاسکتے ہیں ۔ اکوپنکچر کے ذریعے پارکنسن کی وجہ سے ہونے والے نقصان جیسے رعشہ ، لرزہ اور ڈپریشن کو کم کیا جا سکتا ہے۔
اگر آپ کو کمر میں درد رہتا ہے یا نیند میں مسئلہ ہوتا ہے تو ان کے لیے اکوپنکچر کا علاج نہایت سازگار اور مفید طریقہ علاج ہے۔ اپنی تکلیف کے لیے کسی اچھے اکوپنکچرسٹ سے رابطہ کریں تاکہ پتہ چل سکے کہ ہمارا یہ آرٹیکل کس حد تک مفید ثابت ہوا ہے۔

انگریزی میں پڑھنے کے لئے کلک کریں 

تحریر  : سحرش قاضی

ترجمہ   : سعدیہ اویس


The post اکوپنکچر ٹریٹمنٹ 6 طرح سے صحت کو بہتر بنائے appeared first on ایچ ٹی وی اردو.

]]>
پارسلے کے حیرت انگیز فوائد https://htv.com.pk/ur/herbal/parsley-uses-in-urdu Mon, 10 Sep 2018 08:59:34 +0000 https://htv.com.pk/ur/?p=30340 Parsley Uses in Urdu

ہم اکثرپارسلے  اوردھنیے میں فرق نہیں کرپاتے۔ایک ہی فیملی سے تعلق ہونے کی وجہ سے ان کا استعمال بھی ایک جیسا ہے۔پارسلے کی بات کی جائے تو اس کے پتیّ کٹائو دار اور مڑے ہوئے ہوتے ہیں۔اس کی خوشبو اور ذائقہ دھیما ہوتا ہے۔عام طور پر اس کو سلاد اورکھانوں کی سجاوٹ کے  لئے استعمال […]

The post پارسلے کے حیرت انگیز فوائد appeared first on ایچ ٹی وی اردو.

]]>
Parsley Uses in Urdu

ہم اکثرپارسلے  اوردھنیے میں فرق نہیں کرپاتے۔ایک ہی فیملی سے تعلق ہونے کی وجہ سے ان کا استعمال بھی ایک جیسا ہے۔پارسلے کی بات کی جائے تو اس کے پتیّ کٹائو دار اور مڑے ہوئے ہوتے ہیں۔اس کی خوشبو اور ذائقہ دھیما ہوتا ہے۔عام طور پر اس کو سلاد اورکھانوں کی سجاوٹ کے  لئے استعمال کیا جاتا ہے۔

parsleyلیکن پارسلے کو سب سے ممتاز کرنے والی چیز اس کی طبی خصوصیات ہیں۔پارسلے جو اکثر ہمارے کچن میں موجود ہوتا ہے اپنے اندر کچھ طبی فوائد لئے ہوئے ہے جنھیں ہم نہیں جانتے۔

یہاں کچھ طریقے تحریر کئے جارہے ہیں جن کے تحت ہم پارسلے کو دوا کے طور پر بھی استعمال کرسکتے ہیں۔

شوگر کو کنٹرول کرنے میں مدددیتا ہے :

Parsley Uses in Urduروایتی طور پر شوگر کو کنٹرول کرنے کے لئے پارسلے کا استعمال عام تھا۔مرمارہ یونیورسٹی استنبول میں ہونے والی تحقیق اس دعوے کو قبول کرتی ہے ۔کہ پارسلے شوگر کنٹرول کرنے کیلئے مفید ہے۔

یہ تحقیق ذیابیطس کے شکار چوہوں پر کی گئی جس میں ان چوہوں کو ایک ماہ تک پارسلے کھلایا گیا جس سے ان کے بلڈ شوگر لیول میں واضح کمی ہوئی۔ریسرچ میں یہ بھی بتایا گیا کہ انسا ن بھی یہ نتائج حاصل کرنے کے لئے پارسلے کا کس طرح استعمال کرسکتے ہیں۔

سوزش کو ختم کرنے والی خصوصیات:

اس جڑی بو ٹی میں قدرتی طور پرسوزش کو ختم کرنے والی خصوصیات موجود ہیں،یہی وجہ ہے کہ بارانی علاقوں میں کیڑے کے کاٹنے،نیل ،دانت کے درد اور جلدی بیماریوں کے علاج کے لئے اس کا استعمال عام ہے۔ ایک تحقیق سے یہ بھی ثابت ہوا ہے کہ پارسلے میں اینٹی ہیپیٹوٹوکسی سٹی خصوصیات موجود ہیں جو جگر کی صفائی کرکے جسم کی اندرونی سوزش کو بھی ختم کرتی ہے۔

پیشاب آور:

Parsley Uses in Urduپارسلے زیادہ پیشاب لانے کے لئے بھی مفید ہے ۔ جب جسم میں زائد پانی جمع ہوجاتا ہے اور خار ج نہیںہو پاتا اسے ڈروپسی اور ایڈیما کہا جاتاہے دونوں کا علاج کرنے کے لئے پارسلے کا استعمال کیا جاتا ہے ۔اس کے علاوہ یہ ہمارے نظام ہضم کو بھی نقصان دہ ٹوکسن سے پاک کرتا ہے۔

بلڈپریشر کو کم کرنے کے لئے بھی مریض کو پیشاب آور دوائیں دی جاتی ہیں ۔یہ اس کا بہت ہی کارآمد علاج ہے۔جرمنی کے بہت سے ڈاکٹر جو جڑی بوٹیوں کے طبی فوائد سے واقف ہیںوہ بلڈ پریشرکو کم کرنے کے لئے پارسلے کی چائے پینے کا مشورہ دیتے ہیں ۔کیونکہ  ہائی بلڈ پریشرسے صحت کو نقصان پہنچنے اور دوسرے مسائل پیدا ہونے کا خطرہ ہوتا ہے لہٰذا  اس کو دوا کے طور پر استعمال کرنے سے پہلے ڈاکٹر سے مشورہ کرنا نہایت ضروری ہے۔

مزید جانئے : ہیمپ سیڈز کے پانچ حیرت انگیز فوائد

منہ کو صحت مند اور سانسوں کو تازہ رکھتا ہے:

پارسلے کے پتے چبانے سے ناصرف سانس کی بدبو ختم ہوتی ہے بلکہ اپنی اینٹی بیکٹیریئل خصوصیات کی وجہ سے پارسلے منہ کی صحت اورصفائی میں بھی اضافہ کرتا ہے۔اس بوٹی میں موجود کلوروفل کی وافر مقدارمنہ میں چھپے بیکٹیریا کا خاتمہ کرکے سانسوں کو فوری تازگی بخشتی ہے۔

گھٹیا کو کنٹرول کرتا ہے:

پارسلے میں دوسری اقسام کے برعکس اہم مرکبات جیسے بیٹا کیروٹین اوروٹامن سی بھی موجود ہے۔سوزش کو ختم کرنے والی یہ خصوصیا ت جوڑوں کے درد کے خطرات کو کم کرتی ہیں ۔

 یورک ایسڈ کی زیادتی جوڑوں کے درد کی اہم وجہ ہے۔روزانہ کی خوراک میں پارسلے کا استعمال جسم سے یورک ایسڈ کو خارج کرنے میں مدد دیتا ہے۔

پودینہ : صحت کے لاتعداد فوائد

اوسٹیوپوراسس کا علاج:

یہ کہنے میں کوئی مبالغہ نہیں کہ پارسلے کی طبی خصوصیات ہڈیوں کی صحت کو قائم رکھنے میں بھی مددگار ہوتی ہیں ۔جسم میں کیلشیئم کی کمی اوسٹیوپوراسس کاباعث بنتی ہے۔پارسلے ناصرف جسم میں کیلشیئم کو بڑھاتا ہے بلکہ اس میں قدرتی فولک ایسڈبھی موجود ہے جو جسم میں بننے والے امائنو ایسڈ کو توڑتا ہے اور ہڈیوں کو اوسٹیوپوراسس سے بچا کر ان کی صحت بحال کرتا ہے۔

حرف آخر :

پارسلے کو محفوظ کرنے کے لئے  آپ کو اس کے موسم کا انتظار کرنے کی ضرورت نہیں ۔حیرت انگیز طبی خصوصیات رکھنے والی یہ جڑی بوٹی سارا سال رہتی ہے۔حتیٰ کہ آپ اس توانائی سے بھرپور پودے کو اپنے گھر میں بھی اگا سکتے ہیں اور اپنی صحت کو بہتر بنانے کے لئے جب چاہے اس سے وٹامنز اور اینٹی اوکسی ڈینٹس حاصل کرسکتے ہیں ۔

تحریر: ماہا آفریدی

اس آرٹیکل کو انگریزی میں پڑھنے کے لئے کلک کریں  

The post پارسلے کے حیرت انگیز فوائد appeared first on ایچ ٹی وی اردو.

]]>
ہومیوپیتھی کے علاج میں کیا کریں کیا نہیں۔۔۔۔ https://htv.com.pk/ur/homeopathy/homeopathy-medicine-in-urdu Wed, 05 Sep 2018 11:56:58 +0000 https://htv.com.pk/ur/?p=30177 homeopathy

جب ہومیوپیتھک علاج کی بات آتی ہے تو اس کے ساتھ بہت سی باتوں کا خیال رکھنا اور بہت سی باتوں سے بچنا ضروری ہوتا ہے۔نیچے دی گئی فہرست کو غور سے پڑھیں تاکہ طریقہ علاج سے پوری طرح فائدہ حاصل کرسکیں۔ دو اکھانے سے آدھا گھنٹہ پہلے کھاناکھالیں: کسی بھی طرح کی ہومیوپیتھک دوا […]

The post ہومیوپیتھی کے علاج میں کیا کریں کیا نہیں۔۔۔۔ appeared first on ایچ ٹی وی اردو.

]]>
homeopathy

جب ہومیوپیتھک علاج کی بات آتی ہے تو اس کے ساتھ بہت سی باتوں کا خیال رکھنا اور بہت سی باتوں سے بچنا ضروری ہوتا ہے۔نیچے دی گئی فہرست کو غور سے پڑھیں تاکہ طریقہ علاج سے پوری طرح فائدہ حاصل کرسکیں۔

دو اکھانے سے آدھا گھنٹہ پہلے کھاناکھالیں:

کسی بھی طرح کی ہومیوپیتھک دوا کھانے سے آدھا گھنٹہ پہلے تک کچھ نہ کھائیں ۔اگر آپ نے کھانا کھالیا ہے تو اس کے آدھا گھنٹے بعد تک کچھ نہ کھائیں۔اسکے علاوہ دوا کھانے کے آدھا گھنٹے بعد بھی کچھ نہ کھائیں۔یہ ضروری ہے کیونکہ معدے میں کھانے کی موجودگی دوا کے جذب ہونے میں مداخلت پیدا کرتی ہے اور اس کی افادیت کو کم کرتی ہے۔

دوا کو ہاتھ نہ لگائیں:

دوا کو ہاتھ لگانے سے گریز کریں۔ذیادہ تر دوائیں کاغذ یا ساشے میں ہوتی ہیں لہٰذاکوشش کریں کہ دوا کو براہ راست منہ میں ڈال لیںیا اس کے لئے صاف چمچہ استعمال کریں۔دوا کھانے کے لئے ہاتھوں کا استعمال گولی کو آلودہ کر دیتا ہے جس کی وجہ سے اس کی پاور میں کمی ہوجاتی ہے۔ اور دوا پورا اثر نہیں دکھاتی۔

اپنے ڈاکٹر کو مطلع کرتے رہیں:

ہومیوپیتھی کے ماہر ڈاکٹر کو بتا کر اپنی ایلوپیتھک دوائیں بھی جاری رکھیں ۔مثال کے طور پر اگر آپ دل،ہائی  اس کے لئے آپ کا ہومیوپیتھک معالج بہتر طریقے سے آپ کی رہنمائی کرے گا۔لہٰذااپنے معالج کو تفصیل سے اپنی بیماری اوردوا کے بارے میں آگاہ کریں۔ بلڈپریشریامرگی کے مریض ہیں توبہتر ہوگا کہ آپ اپنی دوائیں جاری رکھیں تاکہ آپ کی بیماری ذیادہ نہ بڑھ جائے۔

دوا کو دھوپ میں نہ رکھیں :

اپنی ہومیوپیتھک دوا کو براہ راست دھوپ،مقناطیسی شعاعوںاور کیمیکلزجیسے پینٹ یہاں تک کہ کافورسے بھی دوررکھیں۔ یہ تمام چیزیں براہ راست دواپر اثر ڈالتی ہیںاور اس کی افادیت کو کم کردیتی ہیں ۔ اس لئے بہتر ہوگا کہ انھیںٹھنڈی،خشک اور محفوظ جگہ پربچوں کی پہنچ سے دور رکھا جائے۔ذیادہ ترہومیوپیتھک دوائیں زہریلی نہیں ہوتیں لیکن پھر بھی انھیں چھوٹے بچوں کو نہیں کھلانی چاہیئں۔

طبیعت میں بحالی کے بارے میں ڈاکٹر کو آگاہ کریں:

ہومیوپیتھک علاج اس وقت تک کام نہیں کرتا جب تک اس کی دواکم از کم۳سے ۵ دن تک نہ لی جائے۔اپنے ہومیوپیتھک معالج سے رابطے میں رہیں اور طبیعت میںمنفی تبدیلی یا کوئی تبدیلی نہ ہونے پر ڈاکٹر کوضرور اطلاع کریں۔تاکہ جو دوا آپ لے رہے ہیں وہ اس کا نعم البدل دے یا دوا تبدیل کرسکے۔یہ بات ذہن میں رکھیئے کہ ہومیوپیتھک کی ہر دوا ہر مریض کو ایک جیسا فائدہ نہیں پہنچاتی۔جیسے اگر آپ کے کسی شوگر کے مریض ساتھی کو کسی دوا سے فائدہ ہوا ہے تو ضروری نہیں کہ وہی دوا آپ کو بھی ویسا ہی فائدہ پہنچائے گی۔اس وجہ سے آپ کو پہلے ڈاکٹر سے رابطے اور مرض کی تشخیص کی ضرورت ہوتی ہے۔

ڈاکٹر کے نسخے کے بغیر دوا نہ لیں:

کوئی بھی دوا جس میں ہومیوپیتھک دوائیں بھی شامل ہیں کسی ماہر ڈاکٹر کے تجویز کردہ نسخے کے بغیر نہ لیں ۔کیونکہ آپ نہیں جانتے کہ کون سی دوا آپ کے لئے کس طرح کام کرے گی۔یہ بات ذہن میں رکھئے کہ ابھی اس طریقہ علاج کے بارے میں ذیادہ تحقیق نہیں ہوئی ہے اس لئے گوگل پر بھی اس بارے میں آپ کو ذیادہ معلومات نہیں مل سکے گی۔اس لئے آپ کو ماہر تربیت یافتہ ہومیوپیتھک ڈاکٹر کی ضرورت ہوگی جو آپ کے لئے صحیح دوا اوراس کی خوراک کا تعین کرسکے۔لہٰذا کسی بھی قسم کا ہومیوپیتھک علاج کرنے سے پہلے اپنا طبی معائنہ ضرور کرائیں۔

انگریزی میں پڑھنے کے لئے کلک کریں 

The post ہومیوپیتھی کے علاج میں کیا کریں کیا نہیں۔۔۔۔ appeared first on ایچ ٹی وی اردو.

]]>
کیا ایکوپنکچر کے ذریعے وزن کم کیا جا سکتا ہے؟ https://htv.com.pk/ur/alternative-medicine/acupuncture-weight-loss Thu, 05 Apr 2018 11:25:07 +0000 https://htv.com.pk/ur/?p=27369 acupuncture-weight-loss

ایکوپنکچر (acupuncture) اور اس کی افادیت کے بارے میں مختلف لوگوں کے مختلف عقائد ہیں ۔روایتی چینی علاج کو ہر طرح کے درد،زخموں ،فلو ،گٹھیا یہاں تک کے وزن کم کرنے کے لئے بھی مفید سمجھا جاتا ہے۔ ایکوپنکچرکے حمایتیوں کا کہنا ہے کہ اگ آپ پورے یقین کے ساتھ ایکوپنکچر کا علاج کریں تووزن […]

The post کیا ایکوپنکچر کے ذریعے وزن کم کیا جا سکتا ہے؟ appeared first on ایچ ٹی وی اردو.

]]>
acupuncture-weight-loss

ایکوپنکچر (acupuncture) اور اس کی افادیت کے بارے میں مختلف لوگوں کے مختلف عقائد ہیں ۔روایتی چینی علاج کو ہر طرح کے درد،زخموں ،فلو ،گٹھیا یہاں تک کے وزن کم کرنے کے لئے بھی مفید سمجھا جاتا ہے۔ ایکوپنکچرکے حمایتیوں کا کہنا ہے کہ اگ آپ پورے یقین کے ساتھ ایکوپنکچر کا علاج کریں تووزن کم کرنے کے لئے اس سے بہتر کوئی علاج ہو ہی نہیں سکتا۔

وزن میں کمی اور ایکوپنکچر:

weight-loss-and-acupuncture.jpg

مسئلہ یہ ہے کہ اس کے لئے صرف وزن میں کمی کرناہی مقصد نہیں ہوتا بلکہ یہ ایک منظم ظرز زندگی ہوتا ہے۔اس کے لئے صرف غذا پر کنٹرول اور روزانہ ورزش ہی ضروری نہیں بلکہ ساتھ ہی اپنے جذبات اور سوچ کو بھی کنٹرول کرنا ضروری ہے۔ اس کا مطلب ہے کہ یہ آپ کی پوری نفسیات پر اثر انداز ہوتا ہے۔ دیکھا گیا ہے کہ جو لوگ وزن کم کرنا چاہتے ہیں وہ جلد ہی پریشانی اور ڈپریشن کا شکار بھی ہو جاتے ہیں۔ اسی لئے ایکوپنکچر (acupuncture) کا علاج سامنے آتا ہے ۔دوسرے طریقہ علاج جیسے وزن کم کرنے والی گولیاں اور ڈائٹ پلان کے برعکس اکوپنکچر نہ صرف کیلوریز کم کرنے میں مدد دیتا ہے بلکہ اچھی صحت بھی عطا کرتا ہے۔اس طرح آپ نہ صرف وزن میں کمی کریں گے بلکہ پورے طریقہ کار میں خود کو بہت اچھا محسوس کریں گے۔
سوال یہ ہے کہ وزن کم کرنے کے لئے ایکوپنکچر کس طرح کام کرتا ہے؟کچھ تحقیقات کے مطابق ،انسانی جسم میں کچھ توانائیاں موجود ہوتی ہیں ۔جب ان کا راستہ بیماری یا چربی روکتی ہے تو جسم میں تکلیف یا بیماری پیدا ہو جاتی ہے۔ان مضرتوانائیوں کوایکوپنکچر کی سوئیوں کے ذریعے جسم سے نکالا جا سکتا ہے۔ ایکوپنکچر کے زریعے جسم سے مضر توانائیوں کو نکالنے میں مدد ملتی ہے۔اس طرح جسم میں چربی جمع ہونے کے امکانات سے بچا جاسکتا ہے۔ ایکوپنکچر کے جدید ماہرین کا کہنا ہے کہ ایکوپنکچر کے لئے استعمال ہونے والی سوئیاں بجلی اور مقناطیس کی مدد سے مریض کے نروز کو سکون پہنچاتی ہیں ۔
بہت سے لوگ جنھوں نے اپنے وزن کے مسائل کے لئے ایکوپنکچر کروایا انھیںیہ تجربہ بھی ہواکہ ان کی بھوک میں کمی واقع ہوئی ہے جس سے ہر ہفتے ان کا وزن ایک سے دو پونڈ کم ہو جاتا ہے۔ اس طرح وہ وزن کم کر نے کے لئے اور بھی ذیادہ پر امید ہو جاتے ہیں اور اس طریقہ علاج سے پریشان نہیں ہوتے۔
ایکوپنکچر کرانے والے لوگوں کا یہ بھی کہنا ہے کہ ایک اچھی بات یہ بھی ہے کہ وزن میں یہ کمی مستقل ہوتی ہے اور ایکوپنکچر کرانے کے بعد انھیں نہیں لگتا کہ اب دوبارہ ان کا وزن بڑھے گا ۔لیکن ایسے بھی لوگ ہیں جو اس بات سے بالکل متفق نہیں کہ ایکوپنکچر (acupuncture) کے ذریعے وزن بھی کم کیا جاسکتا ہے۔ان کا کہنا ہے کہ وزن کم کرنے کے لئے غذا میں کمی اور ورزش کی بھی ضرورت ہوتی ہے۔

کیا یہ واقعی کارآمد ہے؟

در حقیقت یہ ایک ذاتی تجربہ ہے جو آپ خود کرسکتے ہیں ۔اکثر لوگ وزن کم کرنے کے لئے ایکوپنکچر کی افادیت کی قسمیں کھاتے ہیں جبکہ دوسرے لوگوں کا کہنا ہے کہ اس سے کوئی فرق نہیں پڑتا ۔اس لئے بہتر ہوگا کہ آپ اس سلسلے میں کسی ماہرسے مشورہ کریں اورپھر فیصلہ کریں۔


انگریزی آرٹیکل: سحرش قاضی
اردو ترجمہ: سائرہ شاہد

The post کیا ایکوپنکچر کے ذریعے وزن کم کیا جا سکتا ہے؟ appeared first on ایچ ٹی وی اردو.

]]>