ایکنی

411

مختصرجائزہ

ایکنی ایک عام جلدی مرض ہے جس کا سامنا تقریبا تمام ہی خواتین و حضرات کو زندگی میں کبھی نہ کبھی کرنا ہی پڑتا ہے۔ خاص کر نوجوانی میں جب آپ کی جلد کے مسام کھلے ہوتے ہیں اور جلدی غدود تیل کا اخراج کرتے ہیں تو یہ دانوں، مہاسوں، سیاہ اور سفید کیلوں کی صورت میں ابھر کر سامنے آتے ہیں۔
ایکنی کی وجہ اکثر لوگ شخصیت میں اعتماد کی کمی کا شکار ہو جاتے ہیں ۔ ایکنی سے نمٹنا مشکل ہوتا ہے خاص کر ایسے افراد کے لئے جن کی کلد چکنی ہوتی ہے ۔

وجوہات

موروثی عوامل:

بعض افرادکوقدرتی طور پر ایکنی ہونے کے خطرات دوسروں کے مقابلے زیادہ ہوتے ہیں۔

 ہارمونز:

ٹیسٹوٹرون ہارمون کی بلند سطح سیبم (شحمی) رطوبت کی پیداوار میں اضافہ کرتی ہے، جس سے ایکنی کا خدشہ بڑھ جاتا ہے۔ ہارمونز کا یہ عمل مرد و عورت دونوں میںرات کی نسبت دن میں زیادہ تیز ہوتا ہے۔

بیکٹیریل انفیکشن:

کھلے ہوئے جلدی مسام بیکٹیریا کی افزائش کیلئے رہائش گاہ ثابت ہوتے ہیں۔ جو جلد میں جمع شدہ چکنائی کی تہہ توڑ کر سوزش پیدا کرتے ہیں اور دانوں یا مہاسوں کی شکل میں نمودار ہوکر غیر اطمینانی کیفیت کا سبب بنتے ہیں۔

علامات:

ایکنی عام طور پر چہرے پر ظاہر ہوتی ہے لیکن اس کے علاوہ یہ گردن، بازوؤں، کندھوں، کمر اور سینے پر ہوسکتی ہے۔ ایکنی نہ صرف ظاہری شخصیت کو متاثر کرتی ہے بلکہ یہ تکلیف،خوف اورذہنی دباؤکا بھی سبب بنتی ہے۔ ایکنی خاص کر نوجوانوں میں نفسیاتی مسائل کی وجہ بھی بن سکتی ہے۔

تشخیص اورعلاج

ایکنی کی تشخیص کلینک میں ممکن ہے جہاں مریض کی میڈیکل ہسٹری کو سمجھتے ہوتے جلد کی جانچ کی جاتی ہے۔ اس وقت تین درجوں کی ادویات کی مدد سے ایکنی کا علاج کیا جارہا ہے۔ جن میں :
ریٹینوائیڈز(retinoids)،
اینٹی بائیوٹکس (antibiotics)اور
بینزیل پری آکسائیڈز (benzylperoxidase)شامل ہیں۔

شدید نوعیت کی ایکنی کا علاج لازمی طور پر ڈرماٹولوجسٹ ہی کرسکتا ہے۔ جراثیم سے جلد کی حفاظت، ادویات کا استعمال اور جلدی مصنوعات اور کاسمیٹکس کا محدود اور محتاط استعمال،اسٹریس سے بچنے کی کوشش اور جلد کی صفائی کا خیال ایکنی سے نجات میں مددگار ثابت ہوسکتے ہیں۔

شاید آپ یہ بھی پسند کریں
تبصرے
Loading...