نوجوانوں کے لیے متوازن غذاکیا ہونی چاہیے؟

5,955

گیارہ سے اٹھارہ سال کی عمر کے درمیان لڑکے اور لڑکیوں میں بہت سی جسمانی تبدیلیاں رونما ہوتی ہیں۔ اس لیے ضروری ہے کہ ان کے لیے صحت بخش غذا کا انتخاب کیا جائے ۔ یہ وہ عمر ہوتی ہے جب جسم بڑھ رہا ہوتا ہے اس لیے اس وقت غذا میں کمی کرنا مناسب نہیں ۔ متوازن غذا کھا کر نوجوان بچے اپنے آپ کو صحت مند اور چاق و چوبند رکھ سکتے ہیں۔

نوجوان بچے زیادہ تر جنک فوڈ کھانا پسند کرتے ہیں ۔ سوفٹ ڈرنکس ، مٹھائیاں ، چپس ، فرائز اور پیزہ کا زیادہ استعمال جسم کو موٹاپے کی طرف لے جا سکتا ہے ۔ نوجوانوں کی متوازن غذامیں کاربوہائیڈریٹ ، پروٹین، اور فیٹس بھی شامل ہو نا ضروری ہیں۔

صحت بخش غذا کیا ہے؟

صحت بخش غذا کھانے کا یہ مطلب نہیں کہ آپ اپنے پسندیدہ کھانے بالکل چھوڑدیں ۔ اس کا مطلب صرف یہ ہے کہ ہر طرح کی غذا کھائیں لیکن ان کھانے پینے کی چیزوں کو کم کریں جن میں شکر یا فیٹس زیادہ ہیں۔ یعنی سوفٹ ڈرنکس، کیک ، چاکلیٹ وغیرہ ۔ اگر آپ کو اپنے وزن کا خیال ہے تو ایک صحت بخش متوازن غذا آپ کا ساتھ دے گی۔ اس کے لیے آپ کو ڈائٹنگ ، ناشتہ ترک کرنے یا فاقہ کرنے کی ضرورت نہیں ۔
کچھ مشورے جو آپکی غذا کو اور موثر بنائیں گے۔

ناشتہ نہ چھوڑیں:

اکثر لڑکے اور خاص طور پر لڑکیاں صبح اسکول کالج جانے سے پہلے ناشتہ نہیں کرتے یا اپنا وزن کم کرنے کے لیے ناشتہ چھوڑدیتے ہیں ۔ اس صورت میں وہ بہت سے غذا ئی اجزاء سے محروم رہ جاتے ہیں ۔ صبح کے ناشتے سے آپ کو ضروری وٹامنز اور منرلز حاصل ہوسکتے ہیں ۔ صبح کے ناشتے میں
۔جوء کا دلیہ
۔ ابلا ہوا انڈا
۔ دو سلائس ٹوسٹ
۔کوئی پھل
پھل اورسبزیاں کھائیں:
پھل اور سبزیاں وہ تمام وٹامنز اور منرلز فراہم کرنے کا ذریعہ ہیں جن کی نوجوانوں کو ضرورت ہوتی ہے ۔ دن بھر میں پانچ مرتبہ پھل اور سبزیاں کھائیں ان میں تازہ پھل اور سبزیوں کے علاوہ پھلیاں ، دالیں اور پکی ہوئی سبزیاں بھی شامل ہیں۔اس کے علاوہ کھجور ،کشمش اور انجیر بھی شامل ہیں۔ دن میں پانچ مرتبہ ان میں سے کوئی نہ کوئی چیز ضرور کھائیں۔

اسنیکس کا استعمال کم کریں:

فاسٹ فوڈ اور اسنیکس کا استعمال کم کریں ۔ سوفٹ ڈرنکس ، چاکلیٹ ، کیک، بسکٹ میں بہت زیادہ کیلوریز ہوتی ہیں ۔ ضرورت سے زیادہ کیلوریز کا استعمال وزن بڑھاتا ہے اور موٹاپے کا باعث بن سکتا ہے۔

زیادہ پانی پئیں:

دن بھر میں کم از کم چھ سے آٹھ گلاس پانی ضرور پئیں ۔ ایک مرتبہ دودھ اور جوس بھی لیا جاسکتا ہے۔

تھکن محسوس ہونا:

اگر آپ تھوڑا کام کر کے یا چل کے تھکن محسوس کرتے ہیں تو اس کی وجہ آئرن کی کمی ہے ۔ یہ مسئلہ نوجوان لڑکیوں میں زیادہ ہوتا ہے کیونکہ پیریڈز کے دوران آئرن کی کمی واقع ہوسکتی ہے ۔ کوشش کریں کہ ایسی غذا کھائیں جس میں آئرن وافر مقدار میں ہو۔ مچھلی ، مرغی ، انڈے ، گوشت، ہرے پتوں والی سبزیاں ، خشک میوے مثلاًکشمش ، خوبانی اور خشک آلوچہ میں آئرن وافر مقدار میں موجود ہوتا ہے۔

وٹامن ڈی:

وٹامن ڈی ہڈیوں اور دانتوں کو صحت مند رکھنے میں مدد دیتا ہے ۔ سورج کی روشنی وٹامن ڈی حاصل کرنے کا بہترین ذریعہ ہے اس کے علاوہ وٹامن ڈی چکنائی والی مچھلی ، گوشت، کلیجی ، انڈے کی زردی اور سیریلز سے بھی حاصل کیا جاسکتا ہے ۔

کیلشیم:

کیلشیم ہڈیوں اور دانتوں کو مضبوط بناتا ہے ۔ کیلشیم حاصل کرنے کے لیے دودھ اور دودھ سے بنی چیزیں بہترین ذریعہ ہیں۔

وزن گھٹانے والی غذائیں:

وزن گھٹانے کے لیے استعمال ہونے والی غذاؤں میں پوری غذائیت نہیں ہوتی ۔ ایسی غذاؤں کے استعمال سے آپ بہت سے وٹامنز اور منرلز سے محروم رہ سکتے ہیں۔ وقتی طور پر تو یہ غذائیں وزن کم کردیتی ہیں لیکن ان کا استعمال ترک کرتے ہی وزن پھر بڑھ جاتا ہے ۔
اگر آپ صحت مند اور چاق وچوبند جسم کے مالک بننا چاہتے ہیں تو ان تمام چیزوں کو اپنی غذا میں شامل کیجئے اور صحت مند زندگی گزاریں۔

مزید جانئے :شفاف پانی۔۔۔اچھی صحت کی ضمانت


شاید آپ یہ بھی پسند کریں
تبصرے
Loading...