جوڑوں کی دائمی سوزش

214

مختصرجائزہ

یہ جوڑوں کی دائمی سوزش کی بیماری ہے۔جوابتداء میں جوڑوں کومتاثرکرتی ہے اورآگے جاکرجسم کے دیگرنظام کوبھی متاثرکرسکتی ہے۔یہ ایک آٹوامیون کی خرابی ہے جس کامطلب ہے کہ جسم کامدافعتی نظام خود ہی حملہ کرتاہے۔اس بیماری میں جوڑوں کے کیپسول کی جھلی متاثرہوتی ہے۔

وجوہات

اس کاصحیح سبب نامعلوم ہے لیکن اس بیماری کی ترقی اوراسے مزید حساس بنانے میں جینیات ایک اہم کرداراداکرتی ہے۔وہ جھلی جوجوڑوں کی مشترکہ صف بندی کرتی ہے۔اس پراینٹی باڈیز کی طرف سے حملہ کیاجاتاہے جوجسم کے مدافعتی نظام کی طرف سے قائم ہوتے ہیں۔یہ عمل سوجن یاجوڑ کے ورم کی طرف جاتاہے۔جوبالآخرہڈیوں کی تباہی اورکمزوری کاباعث بنتا ہیں۔

علامات

گھٹیانماورم مفاصل کی علامات یہ ہیں:

٭جوڑوں کی نرمی اورسوجن(پہلے چھوٹے جوڑمتاثرہوتے ہیں جب شدت مرض میں اضافہ ہوتاہے توبڑ ے جوڑ بھی متاثرہوتے ہیں)

٭جوڑوں کی سختی(صبح اس میں شدت آجاتی ہے)

٭بخار

٭تھکاوٹ

٭وزن میں کمی

بعض اوقات جسم کے دیگرنظام بھی اس مرض سے متاثرہوتے ہیں۔بعض اعضاء جواس سے متاثرہوسکتے ہیں وہ درج ذیل ہیں:

٭جلد

٭گردے

٭دل

٭پھیپھڑے

٭لعاب کے غدود

٭خون کی شریانیں

تشخیص وعلاج

مندرجہ ذیل خون ٹیسٹ اورامیجنگ ٹیسٹ جوڑوں کے درد کی تشخیص کی تصدیق میں معاونت کرتے ہیں:

٭ایریتھروسائٹ سیڈیمینٹیشن ریٹ(ای ایس آر)

٭سی- کریئیٹوپروٹین(سی آرپی)

٭اینٹی سائیکلک سٹرولینیٹڈپیپٹائڈ(اینٹی – سی سی پی)اینٹی باڈیز

٭جوڑوں کاایکسرے

٭جوڑوں کاایم آرآئی

٭جوڑوں کاالٹراساؤنڈ

بیماری میں اضافے کوروکنے کے لئے مندرجہ ذیل ادویات کااستعمال کیاجاسکتاہے۔تاہم اس میں مکمل علاج کاامکان نہیں ہوتاہے:

٭این ایس اے آئی ڈی ایس

٭اسٹیرائڈز

٭بیماری میں ترمیم کے لئے بیماری سے متعلق ادویات(ڈی ایم اے آرڈی ایس)

٭بائیولوجک ایجنٹ(ایڈالیممیب،ریٹاکسیماب وغیرہ)

جب مریض پرادویات کاکوئی مثبت اثرہوتادکھائی نہیں دیتاتوسرجری کے طریقوں پرعمل درآمد کیاجاتاہے۔جوڑوں کے دردمیںسرجری کے مندرجہ ذیل طریقہ کاراپنائے جاتے ہیں:

٭سائنوویکٹمی

٭ٹینڈن ریپئر

٭جوائنٹ فیوژن

٭ٹوٹل جوائنٹ ریپلیسمنٹ


مختصرجائزہ

یہ جوڑوں کی دائمی سوزش کی بیماری ہے۔جوابتداء میں جوڑوں کومتاثرکرتی ہے اورآگے جاکرجسم کے دیگرنظام کوبھی متاثرکرسکتی ہے۔یہ ایک آٹوامیون کی خرابی ہے جس کامطلب ہے کہ جسم کامدافعتی نظام خود ہی حملہ کرتاہے۔اس بیماری میں جوڑوں کے کیپسول کی جھلی متاثرہوتی ہے۔

وجوہات

اس کاصحیح سبب نامعلوم ہے لیکن اس بیماری کی ترقی اوراسے مزید حساس بنانے میں جینیات ایک اہم کرداراداکرتی ہے۔وہ جھلی جوجوڑوں کی مشترکہ صف بندی کرتی ہے۔اس پراینٹی باڈیز کی طرف سے حملہ کیاجاتاہے جوجسم کے مدافعتی نظام کی طرف سے قائم ہوتے ہیں۔یہ عمل سوجن یاجوڑ کے ورم کی طرف جاتاہے۔جوبالآخرہڈیوں کی تباہی اورکمزوری کاباعث بنتا ہیں۔

علامات

گھٹیانماورم مفاصل کی علامات یہ ہیں:
٭جوڑوں کی نرمی اورسوجن(پہلے چھوٹے جوڑمتاثرہوتے ہیں جب شدت مرض میں اضافہ ہوتاہے توبڑ ے جوڑ بھی متاثرہوتے ہیں)
٭جوڑوں کی سختی(صبح اس میں شدت آجاتی ہے)
٭بخار
٭تھکاوٹ
٭وزن میں کمی
بعض اوقات جسم کے دیگرنظام بھی اس مرض سے متاثرہوتے ہیں۔بعض اعضاء جواس سے متاثرہوسکتے ہیں وہ درج ذیل ہیں:
٭جلد
٭گردے
٭دل
٭پھیپھڑے
٭لعاب کے غدود
٭خون کی شریانیں

تشخیص وعلاج

مندرجہ ذیل خون ٹیسٹ اورامیجنگ ٹیسٹ جوڑوں کے درد کی تشخیص کی تصدیق میں معاونت کرتے ہیں:
٭ایریتھروسائٹ سیڈیمینٹیشن ریٹ(ای ایس آر)
٭سی- کریئیٹوپروٹین(سی آرپی)
٭اینٹی سائیکلک سٹرولینیٹڈپیپٹائڈ(اینٹی – سی سی پی)اینٹی باڈیز
٭جوڑوں کاایکسرے
٭جوڑوں کاایم آرآئی
٭جوڑوں کاالٹراساؤنڈ
بیماری میں اضافے کوروکنے کے لئے مندرجہ ذیل ادویات کااستعمال کیاجاسکتاہے۔تاہم اس میں مکمل علاج کاامکان نہیں ہوتاہے:
٭این ایس اے آئی ڈی ایس
٭اسٹیرائڈز
٭بیماری میں ترمیم کے لئے بیماری سے متعلق ادویات(ڈی ایم اے آرڈی ایس)
٭بائیولوجک ایجنٹ(ایڈالیممیب،ریٹاکسیماب وغیرہ)
جب مریض پرادویات کاکوئی مثبت اثرہوتادکھائی نہیں دیتاتوسرجری کے طریقوں پرعمل درآمد کیاجاتاہے۔جوڑوں کے دردمیںسرجری کے مندرجہ ذیل طریقہ کاراپنائے جاتے ہیں:
٭سائنوویکٹمی
٭ٹینڈن ریپئر
٭جوائنٹ فیوژن
٭ٹوٹل جوائنٹ ریپلیسمنٹ


شاید آپ یہ بھی پسند کریں
تبصرے
Loading...