women’s health – ایچ ٹی وی اردو https://htv.com.pk/ur Fri, 22 Jan 2021 09:17:02 +0000 ur hourly 1 https://htv.com.pk/ur/wp-content/uploads/2017/10/cropped-logo-2-32x32.png women’s health – ایچ ٹی وی اردو https://htv.com.pk/ur 32 32 دوران حمل پیدا ہونے والے 6 مسائل جو خطرہ کی علامت ہیں https://htv.com.pk/ur/pregnancy/pregnancy-problems-urdu Tue, 05 Mar 2019 11:47:07 +0000 https://htv.com.pk/ur/?p=29548 Pregnancy Problems in Urdu

حمل اکثرخواتین کے لئے قدرتی جسمانی عمل ہوسکتاہے تاہم زیادہ ترخواتین کے لئے ان کی پہلی پریگننسی کی مدت تیزی سے بدلتی ہوئی علامات کے پیش نظربے چینی اورغیریقینی صورتحال ہوتی ہے۔یہ بات جان لیں کہ نئے جذبات اورخدشات صرف حمل کاایک حصہ ہیں۔بہت سے جوڑے معمولی مسائل پربہت زیادہ تناؤ کاشکارہوجاتے ہیں۔اوراس کشیدگی میںخاندان […]

The post دوران حمل پیدا ہونے والے 6 مسائل جو خطرہ کی علامت ہیں appeared first on ایچ ٹی وی اردو.

]]>
Pregnancy Problems in Urdu

حمل اکثرخواتین کے لئے قدرتی جسمانی عمل ہوسکتاہے تاہم زیادہ ترخواتین کے لئے ان کی پہلی پریگننسی کی مدت تیزی سے بدلتی ہوئی علامات کے پیش نظربے چینی اورغیریقینی صورتحال ہوتی ہے۔یہ بات جان لیں کہ نئے جذبات اورخدشات صرف حمل کاایک حصہ ہیں۔بہت سے جوڑے معمولی مسائل پربہت زیادہ تناؤ کاشکارہوجاتے ہیں۔اوراس کشیدگی میںخاندان ،دوستوں اوریہاں تک کہ اپنے ڈاکٹرکوبھی مبتلاکردیتے ہیں۔
اکثرمعالج اپنے مریضوں کی شکایت کرتے نظرآتے ہیں کہ وہ معمولی معاملات میں بھی ڈاکٹرسے رجوع کرتے ہیں۔وہ ڈرتے ہیں کہ انھیں نظرانداز کیاجارہاہے اوران کامعاملہ سنجیدہ ہے۔حمل کے دوران خواتین کوذہنی طورپرتیارکیاجاتاہے۔کسی بھی خطرے کی نشاندہی کے بارے میں انھیں بہترمعلومات فراہم کی جاتی ہیں لیکن پہلی پریگننسی میں سب کچھ مشکوک اورخطرناک محسوس ہوتاہے۔

Pregnancy Problems in Urdu
ذیل میں پریگننسی سے متعلق خطرے کے کچھ غلط الارم درج ہیں جوضرورت سے زیادہ تشویش کاسبب بنتے ہیں:

1۔اندام نہانی سے معمولی خون آنا

اگرایسامحسوس ہوتوخواتین خوفزدہ ہوجاتی ہیں ضروری نہیں کہ معمولی بلیڈنگ کانتیجہ مس کیرج ہی ہو۔حمل کے پہلے مرحلے کے دوران معمولی بلیڈنگ یادھبہ آسکتاہے۔یہ اضافی محنت،وزن اٹھانے یاجنسی تعلقات کی وجہ سے بھی ہوسکتاہے۔معمولی دھبہ کونظراندازکیاجاسکتاہے لیکن اگربہت زیادہ بلیڈنگ ہوتوفوری طورپرڈاکٹرسے رابطہ کرناچاہئے۔

مزید جانئے :پریگننسی کے بعد پہلے پیریڈز کیا عام پیریڈز سے مختلف ہوتے ہیں؟

2۔بخار

حاملہ خواتین کواکثربخارکی شکایت رہتی ہے۔وہ نہ صرف اپنے بچے کوجراثیم منتقل ہونے سے ڈرتی ہیں بلکہ خواتین کی اکثریت کسی بھی قسم کی ادویات لینے سے گریزکرتی ہیں۔جس کی وجہ سے ان کی بیماری طویل ہوجاتی ہے اوروہ لمبے عرصے تک طبیعت خراب محسوس کرتی ہیں۔سچائی تویہ ہے کہ دوران حمل ادویات کے استعمال سے بچناچاہئے۔اس میں اینٹی سوزش اورالرجی شکن دوائیں(ہسٹامائن کے اثرات کوکم کرنے والی ادویات)محفوظ طریقے سے لی جاسکتی ہے۔

3۔سردرد

یہ ایک حقیقت ہے کہ دوران حمل شدید سردردپری ایکلیمپسیا(وضع حمل کے دوران بے ہوشی )طاری ہوتی ہے جس کی وجہ ہائی بلڈ پریشر ہوسکتی ہے۔لیکن زیادہ ترکیسزمیں سردرد صرف ایک سردردہی ہوتاہے۔جوعام طورسے تھکاوٹ اورکشیدگی کی وجہ سے ہوتاہے۔اس سردردکوموثرطریقے سے منظم کیاجاسکتاہے۔

مزید جانئے :مباشرت سے متعلق وہ سوالات جو خواتین پوچھنے سے کتراتی ہیں

4۔کنٹرکشنز

حمل کے اختتام پرلیبرپین شروع ہوتے ہیںاس سے پہلے ہونے والے پین طبی طورپرغلط تصورکئے جاتے ہیں۔جواکثرغلطی سے رونما ہوسکتے ہیں۔وقت سے پہلے ہونے والے لیبرپین وقت پرہونے والے پین سے مختلف ہوتے ہیں۔وقت پرہونے والے دردوقت گزرنے کے ساتھ ساتھ تیز ہوتے جاتے ہیں۔وہ باقاعدگی سے ہوتے ہیں اوروقت کے ساتھ ان میں شدت آتی جاتی ہے۔وقت سے پہلے ہونے والے دردکی ایک شناخت یہ بھی ہے کہ وہ حرکت یاپوسچرکی تبدیلی سے ٹھیک ہوجاتے ہیں جبکہ حقیقی دردبرقراررہتے ہیں۔

5۔درد

دردہمیشہ مریض کے لئے تشویشناک ہوتے ہیں خاص طورپراگریہ حمل کے اختتام پرہوں تو،کیونکہ یہ لیبرکی پیش روی کی طرف اشارہ کرتے ہیں۔حاملہ خواتین کومشورہ دیاجاتاہے کہ وہ قدرتی طورپرہونے والے دردپر خصوصی توجہ دیں۔اگرسامنے کی طرف تکلیف محسوس ہوتی ہے مثلاً ماہانہ درد کی طرح تواس کامطلب یہ فالز لیبرہیں۔دوسری طرف اگردردیادباؤ پیچھے کی طرف سے ہواوربڑھ کرآگے کی طرف آتاہوتویہ درد حقیقی لیبرکی طرف اشارہ کرتے ہیں۔

مزید جانئے :تولیدی نظام سے متعلق ان باتوں کا جاننا نہایت ضروری

6۔پانی کااخراج

پانی کی تھیلی کاپھٹنالیبرکی ایک یقینی نشانی ہے۔لیکن یہ جانناضروری ہے کہ یہ پانی ہی ہے یاکچھ اور؟رطوبتوں کے راستے ڈسچارج یایہاں تک کہ پیشاب بھی پانی کی تھیلی کے پھٹنے کی الجھن کاسبب بن سکتاہے۔جومریض اچھی طرح سے باخبرہوتے ہیں وہ جانتے ہیں کہ پانی کی تھیلی پھٹنے کااحساس کیساہوتاہے۔جیسے اندام نہانی سے مستقل پانی کااخراج یااچانک تیزی سے پانی بہنا۔
بچہ کی پیدائش ماں اورباپ دونوں کے لئے ہی کشیدہ صورتحال ہوتی ہے۔اچھے ڈاکٹرجسمانی اورنفسیاتی کشیدگی کی اس حالت کوسمجھتے ہیں۔یہ مریض کودوران حمل ہونے والی جسمانی تبدیلیوں اورخطرناک علامات کے بارے میں آگاہ کرنے کے لئے وقت نکالتے ہیں جنھیں جلد ازجلد طبی طورپرحل کرناضروری ہوتاہے۔
اگرماں کوتمام پہلوؤں کے بارے میں تعلیم دے دی جاتی ہے تووہ اپنے آپ کوغیرضروری پیچیدگیوں سے بچالیتی ہے۔حمل کالطف اٹھانے میں اس کی مد دکریں اوراسے بھی ایک قدرتی جسمانی عمل کی طرح سمجھیں جیساکہ یہ ہے۔

انگریزی میں پڑھنے کے لئے کلک کریں    

تحریر : ڈاکتر ثناء انصاری


 

The post دوران حمل پیدا ہونے والے 6 مسائل جو خطرہ کی علامت ہیں appeared first on ایچ ٹی وی اردو.

]]>
بیضہ دانی کے کینسر کی 10علامات ، جن کا جاننا بہت ضروری https://htv.com.pk/ur/womens-health/10-ovarian-cancer-symptoms-in-urdu Thu, 02 Aug 2018 12:10:44 +0000 https://htv.com.pk/ur/?p=29584 10 Ovarian Cancer symtoms in Urdu

گزشتہ چند سالوں میں کینسرجنگل میں آگ کی طرح پھیل رہاہے۔کینسر چھاتی سے پھیپھڑوں تک،پیٹ سے جگرتک،بیضہ دانی سے خصیہ دان تک تیزی سے سامنے آرہاہے۔ کینسرکی یہ تمام اقسام ناقابل یقین ہیں ۔یہی وجہ ہے کہ ہرانسان کومحتاط رہنے کی ضرورت ہے۔خاص طورپراگرآپ کے خاندان میں پہلے ہی سے کوئی کینسرمیں مبتلاہوتو جسم میں […]

The post بیضہ دانی کے کینسر کی 10علامات ، جن کا جاننا بہت ضروری appeared first on ایچ ٹی وی اردو.

]]>
10 Ovarian Cancer symtoms in Urdu

گزشتہ چند سالوں میں کینسرجنگل میں آگ کی طرح پھیل رہاہے۔کینسر چھاتی سے پھیپھڑوں تک،پیٹ سے جگرتک،بیضہ دانی سے خصیہ دان تک تیزی سے سامنے آرہاہے۔

کینسرکی یہ تمام اقسام ناقابل یقین ہیں ۔یہی وجہ ہے کہ ہرانسان کومحتاط رہنے کی ضرورت ہے۔خاص طورپراگرآپ کے خاندان میں پہلے ہی سے کوئی کینسرمیں مبتلاہوتو جسم میں ہونے والی تبدیلیوں پرنظررکھیں۔بیضہ دانی کاکینسرایک ایسامرض ہے جس میں روزبروز تیزی سے اضافہ ہورہاہے۔پوری دنیامیں خواتین میں اس مرض کی تیزی سے تشخیص ہورہی ہے ۔یہ خاموش قاتل کی طرح ہے۔اس مرض کی تشخیص اس وقت ہوتی ہے جب یہ پھیل چکاہوتاہے۔اسی وجہ سے آپ کوہروقت محتاط رہنے کی ضرورت ہوتی ہے۔

 

 

ذیل میں بیان کی گئی دس علامات ایسی ہیں جوبیضہ دانی میں کچھ خرابی اورکینسرکاسبب ہوسکتی ہیں لہٰذاڈاکٹرسے رجوع کریں۔

1۔پیٹ کادرد

اس کینسرکی پہلی علامت پیٹ کے اطراف میں دردہے۔یہ درد زیادہ ترماہواری کے درد جیساہوتاہے اوردوہفتوں کے بعد ختم ہوسکتاہے۔اس سے پیٹ کے مسائل اورماہواری کاکوئی تعلق نہیں ہوتا۔

2۔کھانے میں دشواری

اگرآپ کوکھانے میں دشواری ہوتی ہے بھوک نہیں لگتی یاتھوڑاساکھاناکھاکرپیٹ بھراہوامحسوس ہوتاہے۔یہ تب ہوتاہے جب ٹیومربڑاہوجاتاہے اوروہ بھوک کااحساس ختم کردیتاہے۔

مزید جانئے :منہ کے کینسر کے بارے میں چند ضروری معلومات

3۔پیشاب کے مسائل

یہ بیضہ دانی کے کینسرکی ایک عام علامت ہے۔اگرپیشاب کی عادت میں تبدیلی،زیادتی یایورین کنٹرول میں مسئلہ ہوتوہوسکتاہے کہ کینسرکامرض پھیل رہاہواس سے زندگی کوخطرہ لاحق ہوسکتاہے اسی لئے ڈاکٹرسے رابطہ کریں۔

4۔بدہضمی اورسینے میں جلن

اگراکثروبیشتربدہضمی اورسینے کی جلن کی شکایت ہوتویامتلی ،گیس اورگیس کے دیگرمسائل حد سے زیادہ بڑھنے لگیں تو وجہ بیضہ دانی کے مسائل یااس کاکینسرہوسکتاہے۔

5۔قبض اورڈائیریا

غیرمعمولی باؤل موومنٹ بیضہ دانی کے کینسرکی علامت ہوسکتی ہے۔اگرقبض اورڈائیریاکے دوران اتارچڑھاؤ اورپیٹ ،مثانے اورباؤل پردباؤ محسوس ہوتوفوری طورپرڈاکٹرسے مشورہ کریں۔

مزید جانئے :کینسر کی علامت اور مریضوں کے لئے احتیاطی تدابیر

6۔اپھارہ

پیٹ اورکمرمیں مستقل اپھارہ محسوس ہوتوبیضہ دانی کاکینسرہوسکتاہے۔اگرغذااورطرززندگی میں تبدیلی کئے بغیرآ پ کے کپڑے تنگ ہونے لگیں تو آپ کوچاہئے کہ فوری طورپرڈاکٹرسے رابطہ کریں۔

7۔کمرکے نچلے حصے کادرد

اگرآپ کوکمرکے نچلے حصے میں مستقل درد رہتاہوجیسے لیبرپین ہوتے ہیںتو یہ بیضہ دانی کے کینسرکی علامت ہوسکتی ہے۔کسی بھی غیرمعمولی تکلیف کونظرانداز نہ کریں ۔

8۔اچانک وزن میں کمی

اپنے معمول کی غذااورطرززندگی میں تبدیلی لائے بغیراگرآپ کاوزن تیزی سے کم ہوجائے تویہ غیرمعمولی وزن کی کمی کسی بھی قسم کے کینسرکی علامت ہوسکتی ہے۔

مزید جانئے : معدے کا کینسر علامات،وجوہات اور علاج

9۔ماہانہ سائیکل میں تبدیلی

بیضہ دانی کے کینسرمیں ماہانہ سائیکل میں تبدیلی جیسے حیض کے بے قاعدگی اورخو ن کازیادہ ڈسچارج(بلیڈنگ )ہوتاہے۔یہ اس کینسرکی واضح علامت ہے۔

10۔مباشرت میں تکلیف

اس کینسرمیں مریضہ اکثراس بات کی شکایت کرتی ہیں۔اس کی وجہ ٹیومربھی ہوسکتی ہے اورکچھ اوربھی۔اگرچہ یہ علامت بہت عام نہیں ہے لیکن خیال رکھیں۔

ایک دوعلامات سے ضروری نہیں کہ کوئی شدید خطرہ لاحق ہولیکن اگرآپ میں ان میں سے ایک دوسے زائد علامات پائی جاتی ہیں تو ڈاکٹرسے رابطہ کریں اور اپنا مکمل طبی معائنہ کروائیں۔

انگریزی میں پڑھنے کے لئے کلک کریں

تحریر : سحرش قاضی 

ترجمہ : سائرہ شاہد

 


نظر ثانی  وتصدیق  : ڈاکٹر ندا 


The post بیضہ دانی کے کینسر کی 10علامات ، جن کا جاننا بہت ضروری appeared first on ایچ ٹی وی اردو.

]]>
مباشرت سے متعلق وہ سوالات جو خواتین پوچھنے سے کتراتی ہیں https://htv.com.pk/ur/health/sexual-health Mon, 02 Jul 2018 12:46:58 +0000 https://htv.com.pk/ur/?p=28804 sexual health

مباشرت (sexual health)کے دوران زیادہ درد ہونے کی کیا وجوہات ہیں؟ چند امراض (جیسے تھائی رائیڈ کے مسائل، ذیابیطس یا ہارمونل ایشوز)کے سبب چکناہٹ کم ہونے لگتی ہے جس کی وجہ سے جماع (intercourse)میں تکلیف ہوسکتی ہے۔ بیرونی طور پر کسی چکنی چیز کا استعمال یا ہارمونل تھیراپی خشکی کو ختم کرنے میں مدد کر […]

The post مباشرت سے متعلق وہ سوالات جو خواتین پوچھنے سے کتراتی ہیں appeared first on ایچ ٹی وی اردو.

]]>
sexual health
مباشرت (sexual health)کے دوران زیادہ درد ہونے کی کیا وجوہات ہیں؟

چند امراض (جیسے تھائی رائیڈ کے مسائل، ذیابیطس یا ہارمونل ایشوز)کے سبب چکناہٹ کم ہونے لگتی ہے جس کی وجہ سے جماع (intercourse)میں تکلیف ہوسکتی ہے۔
بیرونی طور پر کسی چکنی چیز کا استعمال یا ہارمونل تھیراپی خشکی کو ختم کرنے میں مدد کر سکتی ہے ۔اگر مسئلہ بر قرار رہے تو کسی اچھے گائنی کولوجِسٹ سے مشورہ کریں

ویجائنہ سے خارج ہونے والے سیال میں بدبوآنا خطرے کی بات تو نہیں؟

مباشرت (sexual health) کے بعد ویجائنہ سے سیال کا اخراج تو ایک قدرتی عمل ہے البتہ اگر اس میں سے بدبو آنے لگے یا اس جگہ پر خارش یا جلن ہونے لگے تو اسکی وجہ ویجائنل انفیکشن ہو سکتی ہے ۔

انفیکشن کا سبب بیکٹیریا بھی ہو سکتا ہے اور فنگس بھی ۔ اگر بروقت علاج کرایا جائے تو اس مسئلے سے بآسانی چھٹکارا حاسل کیا جا سکتا ہے ۔

مباشرت میں دلچسپی ختم ہو جانے کی کیا وجہ ہے؟

اس عمل میں دلچسپی ختم ہونے کا باعث کوئی طبی مسئلہ بھی ہو سکتا ہے ۔ بعض اوقات ذہنی تناؤ یا معاشرتی مسائل کے باعث یہ صورتحال پیش آجاہے ۔اینٹی ڈپریسنٹ یعنی ذہنی دباؤ کم کرنے والی ادویات سے جنس میں دلچسپی کم ہو سکتی ہے ۔ اپنے شریک ِ حیات اور ڈاکٹر سے اس بارے میں کھل کر بات چیت کرنا ضروری ہے تاکہ مسئلے کی اصل وجہ سے کا تعین کرکے علاج کو ممکن بنایا جا سکے ۔ بروقت تشخیص اور درست علاج سے کھوئی دلچسپی کو واپس لایا جا سکتا ہے ۔

مردانہ کمزوری یا بعض مردوں میں خیزش کے عمل (erection) کو برقرار رکھنے کی کیا وجہ ہو سکتی ہے؟

اس کمزوری کی کئی وجوہات ہو سکتی ہیں ۔ ان اسباب میں طبی مسائل، نشہ آور ادویات کا استعمال اور تعلقات میں مسائل شامل ہیں ۔ اس ضمن میں پہلا قدم وجہ کا پتا لگانا اور دوسرا قدم مسئلے کا حل تلاش کرنا ہے ۔ بعض مرد اس بارے میں بات کرنے یا اس کا اقرار کرنے سے کتراتے ہیںجس سے ان میں غصہ اور اضطرابی کیفیت پیدا ہوتی جو مسئلے کو مزید بڑھا دیتی ہے ۔

سرعت انزال (ejaculation)میں مشکل کا کیا سبب ہوتا ہے؟

بعض مردوں میں جماع سے قبل سیال کا اخراج ہوتا ہے جو کہ ایک نارمل عمل ہے ۔ اس کا مقصد جماع کے لئے ضروری چکناہٹ کو پیدا کرنا ہے ۔

اسے ہیجان شہوت (orgasm) سے تشبیح دیا جا سکتا ہے ۔ رفع حاجت کی طرح اس پر بھی عمر اور تجربے کے ساتھ کنٹرول آجاتا ہے ۔ ایک تحقیق کے مطابق تین میں سے ایک مرد کو سرعت انزال میں دشواری کا سامنا ہوتا ہے لیکن وہ عمر بڑھنے کے ساتھ اس پر قابو پانا سیکھ لیتے ہیں ۔

جنسی تعلق کے نتیجے میں کس طرح کے انفیکشنز جسم میں منتقل ہو سکتے ہیں ؟

جنسی تعلق سے پھیلنے والے انفیکشنز (STI) میں گونوریا اور کلیمیڈیا شامل ہیں جن کی تشخیص اور علاج بآسانی ممکن ہے ۔ البتہ اگر لاپرواہی برتی جائے تو ان سے عورت دائمی کمر درد کا شکار ہو سکتی ہے ۔ پریگننسی میں بلیڈنگ یہاں تک کے بانجھ پن کی وجہ بھی یہ انفیکشنز ہو سکتے ہیں ۔ یاد رہے کہ ایچ آئی وی ایڈزاور ہیپاٹائٹس بی/سی بھی جنسی طور پر منتقل ہونے والے انفیکشنز ہیں ۔

انگریزی میں پڑھنے کے لئے لنک پر کلک کریں

The post مباشرت سے متعلق وہ سوالات جو خواتین پوچھنے سے کتراتی ہیں appeared first on ایچ ٹی وی اردو.

]]>
وہ وٹامنز جو خواتین کے لئے نہایت ضروری ہیں https://htv.com.pk/ur/womens-health/absolutely-essential-vitamins-women Mon, 09 Apr 2018 06:29:14 +0000 https://htv.com.pk/ur/?p=27434 Essential viatamins for womens

صحت مند ذہن وبدن کے لئے وٹامنز اورمنرلز بہت اہم ہوتے ہیں۔تحقیق کے مطابق خواتین کی اکثریت زیادہ نہیں تو کم از کم ایک غذائی اجزاء کی کمی کاضرورشکارہوتی ہیں۔ 13ایسے وٹامنز ہوتے ہیں جن کی خواتین کوضرورت ہوتی ہے۔ان وٹامنز کوتمام خواتین کو اپنی غذاکالازمی حصہ بناناچاہئے۔ان میں وٹامن سی،اے،ڈی،ای،کے اوربی(تھیامین اوروٹامن بی ۱۲)،اس […]

The post وہ وٹامنز جو خواتین کے لئے نہایت ضروری ہیں appeared first on ایچ ٹی وی اردو.

]]>
Essential viatamins for womens

صحت مند ذہن وبدن کے لئے وٹامنز اورمنرلز بہت اہم ہوتے ہیں۔تحقیق کے مطابق خواتین کی اکثریت زیادہ نہیں تو کم از کم ایک غذائی اجزاء کی کمی کاضرورشکارہوتی ہیں۔ 13ایسے وٹامنز ہوتے ہیں جن کی خواتین کوضرورت ہوتی ہے۔ان وٹامنز کوتمام خواتین کو اپنی غذاکالازمی حصہ بناناچاہئے۔ان میں وٹامن سی،اے،ڈی،ای،کے اوربی(تھیامین اوروٹامن بی ۱۲)،اس کے علاوہ بہت سے اہم ٹریس منرلز اورفیٹی ایسڈ بھی ضروری ہیں۔تقریباً تیس فیصد خواتین ایک یاایک سے زائد وٹامنز اورمنرلز کی کمی کاشکارہوتی ہیں۔بہت سی خواتین میں یہ خطرہ عمرکے ساتھ بڑھتا رہتا ہے۔اگر سپلیمنٹل ملٹی وٹامنز خارج نہ ہوپائیں توتقریباً ۷۵ فیصد خواتین کووٹامنز کی کمی کاسامناہوسکتاہے۔اسی لئے یہ بات ذہن میں رکھنابھی ضروری ہے کہ کون سے وٹامنز اورمنرلز خواتین کیلئے ضروری اوربہترہیں جوان میں موجود کمی اورہونے والی پیچیدگیوں سے بچاسکیں۔

خواتین کے لئے لازمی وٹامنز

خواتین میں وٹامنز اورغذائیت کی کمی بہت سی بیماریوں کے لئے دروازہ کھول دیتی ہے۔اس کمزوری کے باعث خواتین میں بچے کی پیدائش کی صلاحیت میں کمی،انفیکشن کے خطرات،حساسیت اوربیماریوں کامقابلہ کرنے میں دشواری کاسامناکرناپڑتاہے۔اگرخواتین میں وٹامن کے،ڈی اورکیلشیم کی کمی ہوجائے توپوسٹ مینوپاس جس کے باعث آگے جاکراوسٹیوپروسس کی بیمار ی لاحق ہونے کاخطرہ بڑھ جاتاہے۔اس کے ساتھ ساتھ اینٹی آکسیڈنٹ جیسے وٹامن اے اورسی کی کمی سے آنکھوں کے نقصان کاخطرہ رہتاہے۔بیس،چالیس اورستر سال کی خواتین کواپنی غذامیں ان وٹامنز کااستعمال یقینی بناناچاہئے۔

۱۔اینٹی آکسیڈنٹ وٹامن (اے ،سی اورای)

Vitamins-A-C-and-E

یہ فیٹ حل پذیراینٹی آکسیڈنٹ فری ریڈیکلز کے باعث ہونے والے نقصان سے بچاتاہے۔جواضافی عمر،دل،آنکھ،جلد اوردماغ کی بیماریوں کی بنیادی وجہ بنتاہے۔وٹامن سی سے قوت مدافعت میں اضافہ ہوتاہے جس سے ٹھنڈ ،انفیکشن اوردیگربیماریوں سے بچاؤ ممکن ہوتاہے۔اس کے علاوہ یہ الٹراوائیلٹ شعاعوں اورماحولیاتی آلودگی سے جلداورآنکھوں کی حفاظت کرتاہے۔وٹامن سی پرمبنی غذاؤں کااستعمال یقینی بنائیں۔وٹامن اے اورای صحت مندخلیوں کی حفاظت اورخلیوں کی تبدیلی کوروکتے ہیں۔نیشنل آئی انسٹیٹیوٹ کی ریسرچ کے مطابق وہ لوگ جواپنی غذامیں اے ،ای اورسی وٹامنز نہیں لیتے تو انھیں بڑی عمرمیں موتیا اور میکولرڈی جنریشن کے خطرات لاحق رہتے ہیں۔اے اورای وٹامن جلد کے کینسراور ایجنگ کے مسائل سے بچاتے ہیں۔

۲۔وٹامن ڈی

vitamin D

انڈے،ڈیری مصنوعات اورمشروم سے وٹامن ڈی حاصل کیاجاسکتاہے ساتھ ہی سورج کی روشنی بھی اس کابہترین ذریعہ ہے۔مرد وخواتین کی اکثریت وٹامن ڈی کی کمی کاشکارہوتی ہے۔لوگوں کی اکثریت انڈورکام کرنے کے باعث دھوپ سے مستفید نہیں ہوپاتی۔وٹامن ڈی ہڈیوں کی صحت،دماغی کارکردگی،موڈ کی خرابی کوروکنے اورہارمونل توازن کے لئے ضروری ہے۔ہفتے میں کم از کم پانچ دن پندرہ سے بیس منٹ تک دھوپ ضرورلیں۔گھرمیں رہنے اورپیدائش کے عمل سے گزرنے کے باعث خواتین وٹامن ڈی کی کمی کاشکارزیادہ رہتی ہیں اسی لئے ان کے لئے وٹامن ڈی سے بھرپورغذااوردھوپ کی روشنی نہایت ضروری ہے۔

مزید جانئے  : وٹامنز اور منرلز کی زیادتی کے نقصانات

۳۔وٹامن کے

Vitamin-K

یہ ہڈیوں کی نشوونمااورمضبوطی ،خون کے جمنے اوردل کے امراض سے بچاتاہے۔بہت سی خواتین میں ا س قیمتی غذائی اجزاء کی کمی ہوتی ہے۔مطالعہ کے مطابق جوافراد اپنی غذامیں وٹامن کے کااستعمال کرتے ہیں ا ن میں دل کے امراض کے سبب موت کے خطرات لاحق نہیں ہوتے۔اگرآپ طویل مدت تک اینٹی بائیوٹکس اورکولیسٹرول کم کرنے کی ادویات لیں توآپ میں وٹامن کے کی کمی کاامکان رہتاہے جس کی وجہ سے آنتوں کے مسائل جیسے آئی بی ایس اورانفلیمیٹری باؤل کے امراض درپیش آسکتے ہیں۔وٹامن کے کی دواقسام ہیں جنھیں ہم غذاکے ذریعے حاصل کرسکتے ہیں۔وٹامن کے ون سبزیوں میں پایاجاتاہے اوروٹامن کے ٹو ڈیری پروڈکٹ سے بآسانی حاصل کیاجاسکتاہے ۔وٹامن کے کی کمی سے بچنے کے لئے ہرے پتوں والی سبزیاں،بروکلی،بندگوبھی،مچھلی اورانڈے کااستعمال ضرورکریں۔

۴۔بی وٹامنز (فولیٹ)

vitamin B6

بی وٹامنز،وٹامن بی ۱۲ اورفولیٹ خواتین کے میٹابولزم ،تھکاوٹ سے بچاؤاورکارکردگی میں اضافہ کاسبب بنتے ہیں۔یہ دوسرے وٹامنز کے ساتھ مل کرخون کے خلیوں کوبناتے ہیں جوسیلیولرپروسس،نشوونمااورتوانائی کے اخراج میں مدد دیتے ہیں۔اس کے علاوہ یہ کیلوریز کادرست استعمال کرنے میں بھی کارآمد رہتے ہیں۔صحت مند حمل ،دوران حمل بچے کی نشوونمااورپیدائش کی خرابیوں کی روک تھام میں فولیٹ اہم کرداراداکرتاہے۔یہ بچے کی دماغی اورریڑھ کی ہڈی کی بہترنشوونماکرتاہے۔یہی وجہ ہے کہ حاملہ خواتین میں فولیٹ کی کمی خطرناک سمجھی جاتی ہے۔مچھلی،گوشت،دودھ ،دہی اورانڈے کے استعمال سے وٹامن بی حاصل کیاجاسکتاہے۔بڑی عمرکی خواتین جوخون کی کمی کاشکارہوں انھیں ڈاکٹرکی مدد سے وٹامن بی کی کمی سے بچنے کے لئے اقدامات کرنے چاہئیں۔ہرے پتوں کی سبزیاں،اسپارگس،رس دارپھل اورپھلیوں کے استعمال سے فولیٹ کی کمی سے بچاجاسکتاہے۔

(معالج کا مشورہ :اپنی غذا ؤں کے انتخاب کے بارے میں آپ کومحتاط رہنا ہوگا اور اُن غذاؤں کا چناُؤ کرنا ہوگا جوجسم کواس کی ضرورت کے مطابق وٹامنز فراہم کرسکے ۔تاہم ،اگر معالج وٹامنز سپلیمنٹ استعمال کرنا کا مشورہ دےتو اس مشورے پر سختی کے ساتھ عمل کریں ۔)

انگریزی میں پڑھنے کے لئے کلک کریں

تحریر : ڈاکٹر شازیہ ارم

ترجمہ  : سائرہ شاہد


The post وہ وٹامنز جو خواتین کے لئے نہایت ضروری ہیں appeared first on ایچ ٹی وی اردو.

]]>
خواتین میں پولی سسٹک اووری سنڈروم سے متعلق اہم معلومات https://htv.com.pk/ur/moms/facts-about-polycystic-ovary-syndrome Wed, 07 Feb 2018 08:00:27 +0000 http://htv.com.pk/ur/?p=21573 PCOS symptoms

دنیا میں خواتین کو ( PCOS ) کی مختلف علامات کا سامنا کرنا پڑتا ہے ،ضروری نہیں کہ تمام خواتین میں ایک جیسی علامات واضح ہوں البتہ تمام خواتین میں ( PCOS) کی علامات اس وقت سے ظاہر ہونا شروع ہو جاتی ہیں ۔ جب لڑکی کو پہلی بار ماہواری آئے ،چونکہ اس بیماری کا […]

The post خواتین میں پولی سسٹک اووری سنڈروم سے متعلق اہم معلومات appeared first on ایچ ٹی وی اردو.

]]>
PCOS symptoms

دنیا میں خواتین کو ( PCOS ) کی مختلف علامات کا سامنا کرنا پڑتا ہے ،ضروری نہیں کہ تمام خواتین میں ایک جیسی علامات واضح ہوں البتہ تمام خواتین میں ( PCOS) کی علامات اس وقت سے ظاہر ہونا شروع ہو جاتی ہیں ۔
جب لڑکی کو پہلی بار ماہواری آئے ،چونکہ اس بیماری کا تعلق خواتین میں تولیدی ہارمون کی کمی سے ہے۔ لہٰذا اس بیماری کی سب سے عام علامت بانجھ پن ہے ۔ اس کے علاوہ ( PCOS)کی تمام علامات میں ماہواری میں توازن نہ ہونا ،ماہواری کم آنا ، زیادہ آنا، درد سے آنا ،زائد بالوں کی نشونما ،بالوں کا گرنا ،ایکنی ،وزن کا بڑھنا ،جسم کے حساس جگہ پر تکلیف ہونا ،آواز کا بھاری ہونا ، سینہ میں ابھار نہ آنا اور ڈپریشن شامل ہے ۔

عام علامات

۱۔ماہواری میں عدم توازن

PCOS - periods problems
Source: Google

(PCOS) کی عام علامت حیض کی کمی ہے ۔اگر کسی عورت کو سال میں آٹھ یا آٹھ دفعہ سے کم حیض آئے اور حیض کا بہاؤ تیز یا کم ہو اور اگر یہ شکایات مستقل موجود رہیں تو والدہ کی ذمہ داری ہے کہ بچی کے ان مسائل کو فوری طور پر ڈاکٹر کو بتائیں تاکہ وہ الٹراساؤنڈ کے ذریعے (پی۔سی۔او۔ایس)کی تشخیص کر سکے اور بر وقت علاج نہ کیا جائے تو بعد میں خواتین میں بانجھ پن جیسا مسئلہ شدت اختیار کر جاتا ہے

۲۔ جسم پر رواں بڑھ جانا

اینڈروجن ہارمون لیول میں اضافہ کے باعث خواتین کے چہرے اور جسم پر رواں بڑھ جاتا ہے ۔ یہ زائد بال موٹے اور گہرے رنگ کے ہوتے ہیں یہ بال جسم کے ان حصوں پر زیادہ نشونما پاتے ہیں جن سے مردوں کی مماثلت پیدا ہو۔ جیسے ٹھوڑی،گالوں ،ہونٹوں کے اوپر سینہ اور رانوں پر ۔
ایک اندازے کے مطابق (PCOS)کی شکار خواتین میں زائد بالوں کی نشونما کی شکایت ۶۰ فیصد پیدا ہوتی ہے ،دنیا می سری لنکا اور انڈیا میں اس مسئلہ کی شکایت زیادہ ہوتی ہے ۔

۳۔ بالوں کا گرنا

PCOS - Hair fall
Source: Google

اینڈروجن لیول ہائی ہونے کی وجہ سے قدرتی بال تیزی سے گرتے رہتے ہیں جس کی وجہ سے خواتین مردوں کی طرح سر کے دونوں جانب سے گنج پن کا شکار ہو جاتی ہیں جس سے ان کا ماتھا چوڑا ہونے لگتا ہے۔

۴۔ ایکنی

اگر آپ (PCOS)کا شکار ہیں تو آپ کا چہرہ مستقل چکنا رہے گا جس کی وجہ سے ایکنی کی شکایت شدت اختیار کر جائے گی ۔یوں تو عہد بلوغت میں نوجوانوں کو ایکنی کا مسئلہ درپیش ہوتا ہے لیکن (PCOS) کی وجہ سے پیدا ہونے والی ایکنی کا علاج طویل عرصہ پر محیط ہو سکتا ہے

۵۔ تولیدی صلاحیت میں کمی

(پی۔سی ۔او۔ایس)کی عام علامت تولیدی صلاحیت میں کمی واقع ہونا ہے ،اس بیماری کی وجہ سے خواتین کا ماہواری کا نظام متاثر ہوتا ہے جس کے باعث انڈہ بیضہ دانی سے خارج نہیں ہو پاتا ۔ اگرچہ اس مسئلہ کے حل کے لئے ڈاکٹر مختلف علاج تجویز کرتے ہیں لیکن حمل ٹھہرنے کے بعد حمل میں پیچیدگی میں بھی اضافہ ہو جاتا ہے ۔

البتہ بانجھ پن کے علاج کے ساتھ ورزش ،وزن پر کنٹرول کرنا ،چکنی اور میٹھی چیزوں سے پرہیز کیا جائے تو ماں بننے کے امکانات قوی ہو جاتے ہیں

۶۔ ڈپریشن

ڈپریشن اور (PCOS)کا براہ راست تعلق ہے ایک تحقیق کے مطابق وہ خواتین جو (PCOS)کا شکار ہوں ان کے مزاج میں سختی ،غصہ ،گھبراہٹ ،بے چینی اور افسردگی طاری رہتی ہے ،چونکہ خواتین ایکنی ،وزن میں زیادتی ،بانجھ پن کا شکار رہتی ہیں جس کے باعث عدم اطمینان کی کیفیت میں رہتی ہیں۔

عام طور پر خواتین (PCOS)کی عام علامات پر توجہ نہیں دیتیں اوروقت گزر نے کے بعد اس وقت ڈاکٹر سے رجوع کرتی ہیں جب ڈاکٹر علاج کے ساتھ ساتھ پیچیدگیوں سے بھی آگاہ کر دیتے ہیں جس کی وجہ سے خواتین مایوسی اور اولاد سے محرومی کے باعث ڈپریشن کا شکار ہو جاتی ہیں

۷۔ نیند میں خلل واقع ہونا

پی۔سی۔او۔ایس کی مریضہ کو سوتے میں سانس لینے میں دشواری ہوتی ہے جس سے نیند میں خلل پیدا ہوتا ہے ۔نیند پوری نہ ہونے کی وجہ سے جسمانی اور ذہنی تکان ،چڑ چڑاہٹ پیدا ہونے لگتی ہے

علاج سے متعلق چند ضروری معلومات

۱۔(PCOS)کی علامات واضح ہونے کے بعد ڈاکٹر کے مشورے سے گلوکوز ٹیسٹ ،لپڈ لیول ٹیسٹ اور الٹراساؤنڈ کرائیں تاکہ بر وقت علاج کر کے تولیدی مسائل کی پیچیدگی کو بڑھنے سے روکا جا سکے
۲۔ غذا کے ذریعے پی۔سی۔او۔ایس کا علاج ممکن ہے بشرط یہ کہ مریضہ وزن پر قابو رکھے ،ورزش کرے اور نیند پوری کرے ۔
۳۔پی ۔سی۔او۔ایس کے لئے حمل ضائع کرنے والی دوائیں بھی تجویز کی جاتی ہیں لیکن مستند ڈاکٹر کے مشورے سے ہی ان دواؤں کا استعمالل کرنا چاہئے ان دواؤں کے تین ،چھہ یا آٹھ مہینہ کورس کے ذریعے اینڈروجن لیول کم کیا جاتا ہے
۴۔پی۔سی۔او۔ایس میں توارث کا اہم عمل دخل ہے اگر والدہ کو یہ بیماری ہو بچی میں بھی اس بیماری کے منتقل ہونے کے امکانات ہوتے ہیں
۵۔ پی۔سی۔او۔ایس دیگر پیچیدگیوں (دل کے امراض ،فالج ،کولیسٹرول )کے مسئلہ میں اضافہ کا باعث بنتا ہے لہذا اس بیماری کی کسی ایک علامت واضح ہونے کے بعد فوری طور پر علاج کرنا چاہئے ۔

The post خواتین میں پولی سسٹک اووری سنڈروم سے متعلق اہم معلومات appeared first on ایچ ٹی وی اردو.

]]>