featured – ایچ ٹی وی اردو https://htv.com.pk/ur Fri, 25 Mar 2022 08:10:29 +0000 en-US hourly 1 https://htv.com.pk/ur/wp-content/uploads/2017/10/cropped-logo-2-32x32.png featured – ایچ ٹی وی اردو https://htv.com.pk/ur 32 32 مباشرت سے متعلق وہ سوالات جو خواتین پوچھنے سے کتراتی ہیں https://htv.com.pk/ur/health/sexual-health Fri, 02 Jul 2021 12:46:58 +0000 https://htv.com.pk/ur/?p=28804

مباشرت (sexual health)کے دوران زیادہ درد ہونے کی کیا وجوہات ہیں؟ چند امراض (جیسے تھائی رائیڈ کے مسائل، ذیابیطس یا ہارمونل ایشوز)کے سبب چکناہٹ کم ہونے لگتی ہے جس کی وجہ سے جماع (intercourse)میں تکلیف ہوسکتی ہے۔ بیرونی طور پر کسی چکنی چیز کا استعمال یا ہارمونل تھیراپی خشکی کو ختم کرنے میں مدد کر […]

The post مباشرت سے متعلق وہ سوالات جو خواتین پوچھنے سے کتراتی ہیں appeared first on ایچ ٹی وی اردو.

]]>
مباشرت (sexual health)کے دوران زیادہ درد ہونے کی کیا وجوہات ہیں؟

چند امراض (جیسے تھائی رائیڈ کے مسائل، ذیابیطس یا ہارمونل ایشوز)کے سبب چکناہٹ کم ہونے لگتی ہے جس کی وجہ سے جماع (intercourse)میں تکلیف ہوسکتی ہے۔
بیرونی طور پر کسی چکنی چیز کا استعمال یا ہارمونل تھیراپی خشکی کو ختم کرنے میں مدد کر سکتی ہے ۔اگر مسئلہ بر قرار رہے تو کسی اچھے گائنی کولوجِسٹ سے مشورہ کریں

ویجائنہ سے خارج ہونے والے سیال میں بدبوآنا خطرے کی بات تو نہیں؟

مباشرت (sexual health) کے بعد ویجائنہ سے سیال کا اخراج تو ایک قدرتی عمل ہے البتہ اگر اس میں سے بدبو آنے لگے یا اس جگہ پر خارش یا جلن ہونے لگے تو اسکی وجہ ویجائنل انفیکشن ہو سکتی ہے ۔

انفیکشن کا سبب بیکٹیریا بھی ہو سکتا ہے اور فنگس بھی ۔ اگر بروقت علاج کرایا جائے تو اس مسئلے سے بآسانی چھٹکارا حاسل کیا جا سکتا ہے ۔

مباشرت میں دلچسپی ختم ہو جانے کی کیا وجہ ہے؟

اس عمل میں دلچسپی ختم ہونے کا باعث کوئی طبی مسئلہ بھی ہو سکتا ہے ۔ بعض اوقات ذہنی تناؤ یا معاشرتی مسائل کے باعث یہ صورتحال پیش آجاہے ۔اینٹی ڈپریسنٹ یعنی ذہنی دباؤ کم کرنے والی ادویات سے جنس میں دلچسپی کم ہو سکتی ہے ۔ اپنے شریک ِ حیات اور ڈاکٹر سے اس بارے میں کھل کر بات چیت کرنا ضروری ہے تاکہ مسئلے کی اصل وجہ سے کا تعین کرکے علاج کو ممکن بنایا جا سکے ۔ بروقت تشخیص اور درست علاج سے کھوئی دلچسپی کو واپس لایا جا سکتا ہے ۔

مردانہ کمزوری یا بعض مردوں میں خیزش کے عمل (erection) کو برقرار رکھنے کی کیا وجہ ہو سکتی ہے؟

اس کمزوری کی کئی وجوہات ہو سکتی ہیں ۔ ان اسباب میں طبی مسائل، نشہ آور ادویات کا استعمال اور تعلقات میں مسائل شامل ہیں ۔ اس ضمن میں پہلا قدم وجہ کا پتا لگانا اور دوسرا قدم مسئلے کا حل تلاش کرنا ہے ۔ بعض مرد اس بارے میں بات کرنے یا اس کا اقرار کرنے سے کتراتے ہیںجس سے ان میں غصہ اور اضطرابی کیفیت پیدا ہوتی جو مسئلے کو مزید بڑھا دیتی ہے ۔

سرعت انزال (ejaculation)میں مشکل کا کیا سبب ہوتا ہے؟

بعض مردوں میں جماع سے قبل سیال کا اخراج ہوتا ہے جو کہ ایک نارمل عمل ہے ۔ اس کا مقصد جماع کے لئے ضروری چکناہٹ کو پیدا کرنا ہے ۔

اسے ہیجان شہوت (orgasm) سے تشبیح دیا جا سکتا ہے ۔ رفع حاجت کی طرح اس پر بھی عمر اور تجربے کے ساتھ کنٹرول آجاتا ہے ۔ ایک تحقیق کے مطابق تین میں سے ایک مرد کو سرعت انزال میں دشواری کا سامنا ہوتا ہے لیکن وہ عمر بڑھنے کے ساتھ اس پر قابو پانا سیکھ لیتے ہیں ۔

جنسی تعلق کے نتیجے میں کس طرح کے انفیکشنز جسم میں منتقل ہو سکتے ہیں ؟

جنسی تعلق سے پھیلنے والے انفیکشنز (STI) میں گونوریا اور کلیمیڈیا شامل ہیں جن کی تشخیص اور علاج بآسانی ممکن ہے ۔ البتہ اگر لاپرواہی برتی جائے تو ان سے عورت دائمی کمر درد کا شکار ہو سکتی ہے ۔ پریگننسی میں بلیڈنگ یہاں تک کے بانجھ پن کی وجہ بھی یہ انفیکشنز ہو سکتے ہیں ۔ یاد رہے کہ ایچ آئی وی ایڈزاور ہیپاٹائٹس بی/سی بھی جنسی طور پر منتقل ہونے والے انفیکشنز ہیں ۔

انگریزی میں پڑھنے کے لئے لنک پر کلک کریں

The post مباشرت سے متعلق وہ سوالات جو خواتین پوچھنے سے کتراتی ہیں appeared first on ایچ ٹی وی اردو.

]]>
اینٹی بائیوٹک کا کام کرنے والے 5 قدرتی اجزاء https://htv.com.pk/ur/health/antibiotic-substitutes Wed, 01 May 2019 07:00:03 +0000 https://htv.com.pk/ur/?p=32826 antibiotics

جب دنیا میں میڈیکل سائنس نے اس قدر ترقی نہیں کی تھی، اور دوائیں بنانے والی کمپنیاں نہیں بنیں تھی، تب لوگ قدرتی جڑی بوٹیوں اور اجزاء سے ہی بڑی سے بڑی بیماریوں کا علاج کرتے تھے۔ویسے تو اب میڈیکل سائنس میں بھی جڑی بوٹیوں کا استعمال کیا جاتا ہے، جب کہ ٹیکنالوجی کی ترقی […]

The post اینٹی بائیوٹک کا کام کرنے والے 5 قدرتی اجزاء appeared first on ایچ ٹی وی اردو.

]]>
antibiotics

جب دنیا میں میڈیکل سائنس نے اس قدر ترقی نہیں کی تھی، اور دوائیں بنانے والی کمپنیاں نہیں بنیں تھی، تب لوگ قدرتی جڑی بوٹیوں اور اجزاء سے ہی بڑی سے بڑی بیماریوں کا علاج کرتے تھے۔ویسے تو اب میڈیکل سائنس میں بھی جڑی بوٹیوں کا استعمال کیا جاتا ہے، جب کہ ٹیکنالوجی کی ترقی کے باوجود قدرتی اشیاء کی اہمیت میں کوئی کمی نہیں آئی، یہی وجہ ہے کہ آج بھی دنیا بھر میں مختلف بیماریوں کا علاج گھریلو ٹوٹکوں یا قدرتی اجزاء سے کیا جاتا ہے۔درج ذیل قدری جڑی بوٹیاں یا اشیاء جدید میڈیکل سائنس کی اینٹی بائیوٹک جیسا کام کرتی ہیں۔جانئے ان 5 قدرتی اجزاء کے بارے میں جو اینٹی بائیوٹک کا کام کرتے ہیں۔

شہد

شہد کو ہر بیماری کا علاج کہا جاتا ہے، اور اسے ہزاروں سال سے کئی بیماریوں سے بچاؤ کے لیے استعمال کیا جاتا رہا ہے۔
اس میں شامل قدرتی اجزاء ہاضمے کو درست کرنے سمیت نزلہ، زکام، بلغم اور سینے میں درد جیسے مسائل سے نجات دلاتے ہیں، جب کہ یہ خون کو صاف کرکے چہرے کی رونق بھی بحال کرنے میں مدد فراہم کرتی ہے۔

لہسن

اگر لہسن کو علاج کے لیے پہلی قدرتی جڑی بوٹی کہا جائے تو غلط نہ ہوگا، کیوں کہ اسے صدیوں سے لوگ بیماریوں سے محفوظ رہنے کے لیے استعمال کرتے آر رہے ہیں۔جدید سائنس اور ہربل میڈیسن میں سن 1700 سے لہسن کو بطور دوا استعمال کیا جا رہا ہے، لہسن میں شامل اجزاء جہاں اینٹی بائیوٹک کا کام کرتے ہیں، وہیں یہ اینٹی وائرل، اینٹی فنگل اور اینٹی مائکروبیل کا کام بھی کرتے ہیں۔آسان الفاظ میں یہ کہ لہسن میں شامل اجزاء انسانی جسم میں پیدا ہونے والے بیکٹیریا اور جراثیم کے لیے خطرہ اور انسانی صحت کے لیے دوست ہوتے ہیں۔


اس بارے میں جانئے :سیڑھیاں چڑھنا بلڈ پریشر کے مریضوں کے لئے فائدہ مند ہے ؟

 

اوریگانو کا تیل یا پتے

اوریگانو خوشبودار جڑی بوٹی ہوتی ہے، جسے کھانوں کو ذائقہ دار بنانے کے لیے بھی استعمال کیا جاتا ہے، اسے نازبو یا مرزنگوش بھی کہا جاتا ہے۔دیہی علاقوں میں اس جڑی بوٹی کے پتے کھانوں میں کئی سال سے استعمال کیے جا رہے ہیں، اس میں بھی لہسن اور پودینے جیسی خاصیات ہیں، جو ہاضمے سمیت دیگر نظام کو درست کرتے ہیں۔اوریگانو کا تیل مالش اور جوڑوں کے درد سمیت جسم کے دیگر درد کے لیے بھی فائدہ مند ہوتا ہے۔

اکنیشا کا پھول

اس خاردار گلابی پھول کو سالوں سے ہربل میڈیسن میں استعمال کیا جا رہا ہے، اس پھول میں شامل اجزاء خون میں خرابی یا زہر پیدا کرنے جیسی بیماریوں کو روکتے ہیں۔اس پھول کو مشروب کی تیاری میں بھی استعمال کیا جاتا ہے، اس میں شامل اینٹی بیکٹیریل اجزاء نزلہ و زکام سے بھی محفوظ رکھتے ہیں۔اس پھول کو مَخروطی پُھول والا پودا یا کھڑے پھول والا پودا بھی کہا جاتا ہے۔

چاندی کا عرق یا اس سے تیار دوا

یہ فارمولا آج کل میڈیکل سائنس کی دنیا میں تیزی سے اپنایا جا رہا ہے، کئی ملٹی نیشنل کمپنیاں اپنے اینٹی بائیو ٹک دوائیوں میں اس کا استعمال کرتی ہیں۔سب سے پہلے اس کا استعمال 1900 میں کیا گیا، میڈیسن کی معروف کمپنی سِرِل نے سب سے پہلے اس سے اینٹی بائیوٹک دوا تیار کی۔اس میں شامل اجزاء اینٹی بائیوٹک کا کام کرکے اینٹی بیکٹریا اور جراثیم کا خاتمہ کرتے ہیں جو انسان کے دفاعی نظام کو متاثر کرکے ہاضمے اور نزلہ، زکام جیسی بیماریاں پیدا کرتے ہیں۔


مزید جانئے : آپ کو اپنی شادی پر کتنا خرچہ کرنا چاہئے؟


The post اینٹی بائیوٹک کا کام کرنے والے 5 قدرتی اجزاء appeared first on ایچ ٹی وی اردو.

]]>
دوران حمل یوگا کی 3آسان ومحفوظ مشقیں https://htv.com.pk/ur/pregnancy/yoga-pregnancy Mon, 29 Apr 2019 10:30:39 +0000 https://htv.com.pk/ur/?p=27843

دوران حمل ایکٹو رہنا اسٹریس کو کم کرنے کے ساتھ ساتھ جسم کے بارے میں آگاہی بھی فراہم کرتا ہے۔اس سلسلے میں یوگا کی ورزشیں مددگار ثابت ہوتی ہیں۔یوگا کی یہ ورزشیں دوران حمل بھی کی جاسکتی ہیں۔ لیکن ضروری ہوگا کہ یہ ورزش شروع کرنے سے پہلے آپ اپنی ڈاکٹر سے مشورہ کریں اگر […]

The post دوران حمل یوگا کی 3آسان ومحفوظ مشقیں appeared first on ایچ ٹی وی اردو.

]]>

دوران حمل ایکٹو رہنا اسٹریس کو کم کرنے کے ساتھ ساتھ جسم کے بارے میں آگاہی بھی فراہم کرتا ہے۔اس سلسلے میں یوگا کی ورزشیں مددگار ثابت ہوتی ہیں۔یوگا کی یہ ورزشیں دوران حمل بھی کی جاسکتی ہیں۔
لیکن ضروری ہوگا کہ یہ ورزش شروع کرنے سے پہلے آپ اپنی ڈاکٹر سے مشورہ کریں اگر وہ آپ کو اس کی اجازت دے تو یہ ورزش کریں تاکہ دوران حمل چاق و چوبند رہیں۔

کیٹ کائو پوز:

pregnant
یہ ورزش حمل کے دوران کرنے کی سب سے آسان اور محفوظ ورزش ہے۔یہ ورزش پیٹ کے مسلزکو مضبوط بنانے کے ساتھ ریڑھ کی ہڈی کو بھی لچک دار بناتی ہے۔ان ورزش کے ذریعے آپ بھی اپنے پیٹ کے مسلز کو لچک دار بنا کر زیادہ گنجائش پیدا کر سکتے ہیں۔
۱۔ زمین پر ہاتھ اور گھٹنے ٹیک کر کیٹ پوز بنائیں۔اس طرح کہ آپ کی کلائیاں کاندھوں کی سیدھ میں اورگھٹنے کولہوں کی سیدھ میں ہوں۔ہاتھوں کو زمین پر سیدھا رکھیں،سردرمیان میں اورنظر زمین کی طرف رکھیں۔گھٹنوں کے درمیان تھوڑا گیپ دیں تاکہ گھٹنے سیدھے رہیں۔
۲۔کائو پوز میں رہ کر پیٹ کو نیچے لٹکا کر سانس لیں۔پھر اپنے سر اور تھوڑی کو چھت کی طرف اٹھائیں۔
۳۔ کاندھوں کو ہلکا سا پھیلا کر کانوں سے دو رلے جائیں ۔
۴۔اب سانس کو باہر نکالتے ہوئے دوبارہ کیٹ پوز بنائیں اورپیٹ کو اندر کی طرف لے جائیں ۔کمر کو چھت کی طرف ابھاریں بالکل اسی طرح جیسے بلی اپنے جسم کو پھیلاتی ہے۔
۵ ۔سر کو نیچے جھکائیں ،تھوڑی کو سینے سے دور رکھیں۔
۶۔سانس اندر لیتے ہوئے کائو پوز بنائیںاور سانس باہر نکالتے ہوئے کیٹ پوز بنائیں ۔
۷۔۱۰ سے ۲۰ مرتبہ یہ عمل دہرائیں۔

مزید جانئے :یوگا کے حیرت انگیز فوائد

برج پوز:

pregnant
یوگا کی یہ ورزش پیٹ کو مضبوط بناتی ہے اور کمر کے نچلے حصے کو کھولتی ہے۔اگر آپ کی کمر پر زور نہ پڑے تو یہ ورزش ۹ویں مہینے تک محفوظ ہے۔
۱۔کمر کے بل زمین پر لیٹ جائیں گھٹنوں کو موڑ لیں اور پیروں کو سیدھا رکھیں آپ کی ایڑیاں گھٹنوں کی سیدھ میں ہوں دونوں بازو زمین پر رکھیں اور انگلیوں کے سرے چھت کی سمت رکھیں۔ہاتھوں کو اس طرح گھمائیں کہ دونوں ہاتھوں کی ہتھیلیاں ایک دوسرے کے سامنے ہوں۔
۲۔ اپنے کاندھوں پر زور دے کر سینے کو اوپر اٹھائیں اور دونوں کولہوں کو اوپر کی طرف لے جائیں ۔اپنی نگاہ چھت کی طرف رکھیں ۔
۳۔پیروں پر زور دیتے ہوئے گھٹنوں کو آگے بڑھائیں اور کولہوں کو اوپر اٹھائیں۔یہاں تک کہ گھٹنوں کی سیدھ میں آجائیں۔
۴۔کہنیوں کو کھینچ کر اپنے نیچے انگلیاں ایک دوسرے میں پھنسا لیں۔دونوں کولہوں کو اوپر لے جائیں اس طرح آپ کے کولہے اور گردن سیدھ میں ہوں۔
۵۔ہنسلی کی ہڈی (کالر بون)کوکھینچتے ہوئے سر کی پشت پر ہلکا سا زور دیتے ہوئے سینے کو اوپر اٹھا لیں۔کمر کو اسی طرح اٹھائے ہوئے ۵ مرتبہ گہرا سانس لیں۔
۶۔پھر انگلیوں کو کھول کر آہستہ آہستہ اپنا جسم سے نیچے لے آئیں۔
احتیاط:
برج پوز بناتے ہوئے آہستہ آہستہ جسم کو اوپر اٹھائیں۔اس طرح پیٹ کے اگلے حصے پر زور کم پڑے گا ۔

کنگ پیجن پوز:

pregnant
پیٹ کے مسلز کی مضبوطی اور کولہوں کو زیادہ کھولنے کے لئے یہ ورزش مفید ہے۔یہ ورزش حمل کی ہر سہ ماہی میں کی جاسکتی ہے۔حمل کے آخری مہینوں میں جب پیٹ زیادہ بڑھ جاتا ہے تو اس ورزش کے لئے کولہوں کے نیچے تکیہ رکھ لیں۔
۱۔اپنے ہاتھوں اور گھٹنوں کو میز کی شکل میں زمین پر رکھیں ۔
۲۔اپنا دایاں گھٹنا دونوں ہاتھوں کے درمیان لائیں اس طرح کہ دایاں ٹخنہ بائیں کلائی کے قریب آجائے۔ اپنی بائیں ٹانگ گھٹنے کے پیچھے سے لے جاکر گھٹنا اور پیر کا اوپری حصہ زمین پر رکھیں۔
۳۔اپنا دھڑاوپراٹھائیں اورپیروں کی انگلیوں پر زورر دیں ۔اپنے جسم کا اگلا حصہ پھیلاتے ہوئے جسم کو ایڑھیوں کی طرف لے جائیں۔اپنے دھڑ کو سیدھ میں لاکر کولہوں کو پلٹ لیں۔اپنے وزن کو کولہوں پر رکھیں اور پیروں پر سے کم کریں ۔پیروں کی پشت پر پنجوں پر زور دیں اور نیچے کی طرف دیکھیں۔
۴۔۱ منٹ تک یہ پوز قائم رکھیں۔
۵۔ سکون میں آنے کے لئے۔اپنا گھٹنا زمین سے اٹھائیں اورپھر اپنے پوز کوبیٹھے ہوئے مینڈک کی شکل میں لے آئیں۔

انگریزی آرٹیکل پرھنے کے لئے کلک کریں  

ترجمہ:سعدیہ اویس


The post دوران حمل یوگا کی 3آسان ومحفوظ مشقیں appeared first on ایچ ٹی وی اردو.

]]>
غصے کو کیسے دور بھگائیں؟ https://htv.com.pk/ur/mind-body/ghussay-ko-dur-bhagayain Tue, 26 Mar 2019 05:01:19 +0000 http://htv.com.pk/ur/?p=24388 ghussay se bachain

غصہ آنا ایک فطری عمل ہے ۔اگرکوئی انسان یہ کہے کہ اسے غصہ بہت آتا ہے یا بہت کم آتا ہے یا تو پھروہ بالکل ٹھنڈے مزاج کا حامل ہے اس میں سے کچھ بھی اس کے خود کے اختیارمیں نہیں ہوتا۔ یہ حقیقت ہے کہ غصہ ہرانسان کوآتا ہے بس کچھ لوگ اس پر […]

The post غصے کو کیسے دور بھگائیں؟ appeared first on ایچ ٹی وی اردو.

]]>
ghussay se bachain

غصہ آنا ایک فطری عمل ہے ۔اگرکوئی انسان یہ کہے کہ اسے غصہ بہت آتا ہے یا بہت کم آتا ہے یا تو پھروہ بالکل ٹھنڈے مزاج کا حامل ہے اس میں سے کچھ بھی اس کے خود کے اختیارمیں نہیں ہوتا۔ یہ حقیقت ہے کہ غصہ ہرانسان کوآتا ہے بس کچھ لوگ اس پر قابو پانا جانتے ہیں اورکچھ ناکام ہوجاتےہیں۔
بہتر یہی ہے کہ جب بھی آپ کوغصہ آئے تو اگرآپ کھڑے ہیں تو بیٹھ جائیں اوراگربیٹھے ہوئے ہیں تواس جگہ سے دور ہوجائیں یا پھر پانی پی لیں تاکہ غصہ ٹھنڈا ہوسکے۔ اگرآپ پھر بھی اس غصہ جیسے مسئلہ کا مستقل شکارہیں یا بات بات پر غصہ کرنے کے عادی ہیں تو ذیل میں دئے گئےان چند نکات سے مستفید ہوں:

۱۔مراقبہ کریں

مراقبہ کرنے سے دماغ پرسکون رہتا ہے۔مراقبہ اعصابی نظام میںمثبت اثرات مرتب کرتاہے ۔یہ خاص طورپردماغ کے اس حصہ پرکام کرتاہے جہاں سے جذبات کی نشو و نما ہوتی ہے۔مراقبہ غصہ کے جذبات کوکم کرنے کئ لئے نہایت سازگار ہے۔

مزیدجانئے :غصہ پر قابو پانے کے نسخے

۲۔مثبت سوچ و فکرپیدا کریں

منفی سوچ و فکر کی جگہ اپنے دماغ میں مثبت سوچ و فکر کوجگہ دیں۔اگرکسی بات پرآپ کوغصہ آتاہے تو اس کے مثبت پہلوپربھی غورکریں۔مثبت سوچ انسان کوبہت سی برائیوں سے بچالیتی ہے اور غصی بھی انسان کی شخصیت کے لئے برائی تصور کی جاتی ہے۔

۳۔سانس لینے کا دورانیہ طویل کریں

عمل تنفس ایک ایسا پلیٹ فارم تخلیق کرتاہے جس پر تمام چیزیں جیسے صحت،خوشی،دانشمندانہ صلاحیت اوراعلٰی کارکردگی،کامیابی اوراثرانگیزی تعمیرہوتی ہے۔منظم عمل تنفس سے آپ ایک منٹ میں منفی ہارمون کارٹی سول کوخون کے بہاؤ سے خارج کرسکتے ہیںاور مثبت ہارمون پیدا کرسکتے ہیں۔

مزیدجانئے :بچوں میں غصہ ، وجوہات اور بچاؤ

۴۔اپنے لئے وقت نکالیں

کام کے اضافی بوجھ میں الجھنے کے سبب بھی بعض اوقات انسان کوبلاوجہ ہی غصہ آنے لگتاہے۔ اسی لئے کام کی مصروفیت اپنی جگہ لیکن اپنی دماغی صحت کوبرقراررکھنے کے لئے کچھ اچھاوقت اپنے لئے بھی نکالیں ۔

۵۔دوستوں سے بات کریں

دوست دکھ درد کے ساتھی ہیں غصہ کے نقصان دہ اثرات سے بچنے کے لئے اپنے بہترین دوست سے رابطہ کریں۔ اگر کوئی صورتحال آپ کے لئے مسئلہ بن رہی ہے تو دوست سے مشورہ کریںتاکہ دل کا بوجھ بھی ہلکا ہوں ۔

مزید جانئے:غصہ کو اپنادشمن نہیں دوست بنائیں

۶۔حقیقت کا سامنا کریں

اچھائی اوربرائی یہ دونوں چیزیں زندگی کاحصہ ہیں۔زندگی میں درپیش تلخ حقائق کاکھلے دل سے سامناکریں ۔یہی زندگی ہے اور اسی کا سامنا کرنے کےلئے آپ کو ہمہ وقت تیار رہنا ہے تاکہ کسی بھی پریشان کن صورتحال میں غصے کے بجائے صبر وتحمل کے ساتھ اسے حل کریں۔

۷۔نشہ آوراشیاء سے پرہیز

اگرآپ اسموکنگ یادیگرنشہ آوراشیاء کی لت کاشکارہیں تو یہ اشیاء بھی غصے کو کھلی دعوت دینے کے مترادف ہیں۔ان چیزوں کا استعمال کم کرنے کی کوشش کریں۔نشہ آوراشیاء جسمانی صحت کے ساتھ ساتھ دماغی صحت کوبھی متاثرکرتی ہیں جس کے منفی اثرات غصہ اوردیگرطریقوں کی صورت مختلف اوقات میں سامنے آتے ہیں۔

مزید جانئے :بچوں میں احساس کمتری کی وجوہات

۸۔مسئلہ کاحل تلاش کریں

اگرآپ گھریلو ،معاشی یامعاشرتی مسائل میں گھرے ہوئے ہیں تو انھیں حل کرنے کی کوشش کریں۔قابل ،باصلاحیت اوربااعتماد لوگوں سے مشورہ ضرورکریں۔بہترین مشورہ آپ کے مسائل حل کرنے میں کارآمد ہوسکتاہےورنہ آپ انھی مسائل میں الجھے رہیں تو یہ غصے کا باعث بنتے رہیں گے۔

۹۔الیکٹرولائٹس میں توازن رکھئے

ہمارے جسم میں چارالیکٹرولائٹس کیلشیم،میگنیشیم،پوٹاشیم اورسوڈیم ہیں۔جتناجسم میں سوڈیم زیادہ موجود ہوگاجسم کے خلیات میں اتناہی زیادہ پانی ذخیرہ ہوتاجائے گااوریہ عمل بلڈ پریشرکوبڑھادیتاہے جو غصہ کی بڑی وجہ ہے۔

مزید جانئے :4عام نفسیاتی مسائل اورادویات کے سائڈ افیکٹس

۱۰۔لذیذ اورمزیدارغذائیں کھائیں

لانڈے کی سفیدی،مچھلی،پھل،سبزیاں ،اناج،بلیک بیری،بلیک سویابین،ثابت مونگ دال،ناریل اورہیزل نٹ کھائیں ۔ ایک تحقیق کے مطابق اپنی پسند کی غذا کھانے سے مزاج پر اچھے اثرات مرتب ہوتے ہیں۔

The post غصے کو کیسے دور بھگائیں؟ appeared first on ایچ ٹی وی اردو.

]]>
ذہن و بدن میں توازن قائم کرنے کے 10 اصول https://htv.com.pk/ur/mind-body/10-ways-to-maintain-mind-body-balance Mon, 18 Mar 2019 05:00:59 +0000 http://htv.com.pk/ur/?p=20538 10-ways-to-maintain-mind-body-balance

صحت کا نام لیتے ہی ذہن میں غذا اور ورزش کا خیال آتا ہے۔ہماری صحت کا تعلق صرف ہمارے جسم سے ہی نہیں ،بلکہ ذہن و بدن دونوں پر صحت کے کے اثرات رونما ہوتے ہیں۔ مثال کے طور پر ذہنی پریشانی جسمانی صحت پر برا اثر ڈالتی ہے اور اکثر ہمیں بیمار کردیتی ہے […]

The post ذہن و بدن میں توازن قائم کرنے کے 10 اصول appeared first on ایچ ٹی وی اردو.

]]>
10-ways-to-maintain-mind-body-balance

صحت کا نام لیتے ہی ذہن میں غذا اور ورزش کا خیال آتا ہے۔ہماری صحت کا تعلق صرف ہمارے جسم سے ہی نہیں ،بلکہ ذہن و بدن دونوں پر صحت کے کے اثرات رونما ہوتے ہیں۔
مثال کے طور پر ذہنی پریشانی جسمانی صحت پر برا اثر ڈالتی ہے اور اکثر ہمیں بیمار کردیتی ہے ۔اس لیے ذہن و بدن میں ایک صحت مند توازن قائم ہونا ضروری ہے۔
ہماری روز مرہ زندگی میں ایسی بہت سی چیزیں ہیں جو ہمیں ذہنی اور جسمانی طور پر متوازن رکھ سکتی ہیں۔

پڑھنا اور سیکھنا نہ چھوڑیں:

تعلیم مکمل ہونے کے بعد بھی سیکھنے کا عمل جاری رکھیں۔ مطالعہ کر کے ، دستاویزی پروگرام دیکھ کر اور اس طرح کے معلوماتی پروگرام میں شرکت کر کے بھی معلومات میں اضافہ کیا جاسکتا ہے۔یہ چیزیں ناصرف معلومات میں اضافہ کریں گی بلکہ ذہن کو بھی صحت مند بنائیں گی۔

مراقبہ کریں:

مراقبہ یعنی meditation یادداشت میں اضافہ کرتا ہے ۔ طبیعت میں خوشگوار تبدیلی لاتا ہے اس سے قوت مدافعت بھی بڑھتی ہے۔ نیند اور جسمانی کارکردگی بہتر ہوتی ہے۔ صبح سویرے کچھ وقت مراقبہ اور اللہ کے ذکر میں گزاریں اور تمام فوائد حاصل کریں۔

یوگا کریں:

یوگا کی مشقیں صحت پر حیرت انگیز حد تک اثر ڈالتی ہیں جسم کو طاقتور اور لچکدار بنانے کے ساتھ ذہن کو بھی پرسکون بناتی ہیں۔یہ مشقیں ذہن اور بدن کے درمیان توازن قائم کرنے میں مدد گار ثابت ہوتی ہیں۔

زیادہ دیر بیٹھے رہنے سے گریز کریں:

ہر وقت یا زیادہ وقت بیٹھنے کے بجائے کھڑے ہوکر یا چل پھر کر کام کریں۔ ہر وقت بیٹھے رہنا دل کی بیماریوں اور ذیابیطس کا بھی باعث بن سکتا ہے۔

ورزش کریں:

خود کو کام کرنے کا عادی بنائیں روزانہ چہل قدمی کریں۔ روزانہ کم از کم پندرہ منٹ ورزش کریں صحت مند دل ،جسمانی اسٹیمنا اور اچھے موڈ کے لیے ورزش بہت ضروری ہے ۔

کچھ وقت باہر بھی گزاریں:

ہروقت کام میں لگے رہنے یا گھر میں بیٹھے رہنے کے بجائے کچھ وقت باہر تازہ ہوا میں بھی سانس لیں ۔ باہر گھومنے پھرنے اور تفریح کے موقعے تلاش کریں۔

اپنی غذا میں پھل اور سبزیاں شامل کریں:

مہلک بیماریوں سے بچنے کے لیے اپنی غذا میں تازہ پھل اور سبزیاں شامل کریں ان کا زیادہ استعمال ذہن اور بدن کے توازن میں اہم کردار ادا کرتا ہے۔

فلاحی کام کریں:

اپنی صلاحیتوں کو برؤے کار لاتے ہوئے فلاحی کام کریں کسی کی مدد کر کے ملنے والا ذہنی سکون آپ کی پوری شخصیت پر خوشگوار اثر ڈالے گا۔

اپنے شوق پورے کریں:

اپنی مصروف زندگی میں سے کچھ وقت ایسے کاموں کے لیے بھی نکالیں جنھیں کر کے آپ کو خوشی محسوس ہو۔ ہم میں سے اکثر اپنے کاموں میں اتنے مصروف ہوجاتے ہیں کہ وہ تمام دلچسپیاں بھول جاتے ہیں جن سے ہمیں خوشی حاصل ہو جیسے کچھ لکھنا ،مصوری کرنا،باغبانی یا تیراکی وغیرہ ۔

دوسروں کی پرواہ نہ کریں:

اپنے ہر معاملے میں دوسروں کے خیالات کی پرواہ نہ کریں اور نہ ہی یہ سوچیں کہ کوئی کیا کہے گا نہ اس بات کی پرواہ کریں کہ دوسرے لوگ آپ کو پسند کرتے ہیں یا نہیں۔کیونکہ ایسا کرنے سے آپ ہروقت پریشان اور فکروں میں مبتلا رہیں گے۔

 مزید جانئے :غصے کا مثبت استعمال کرنے کے ٹوٹکے


The post ذہن و بدن میں توازن قائم کرنے کے 10 اصول appeared first on ایچ ٹی وی اردو.

]]>