سلائڈ شوز

شیر خواربچوں کے لیے 14مزیدار اور صحت بخش فنگرز فوڈز


فنگر فوڈ دراصل ایک چھوٹے نوالے یا لقمے جتنا فوڈ جسے چھوٹے اور بڑھتے ہوئے شیرخوار بچے آسانی سے کھا کر ہضم کرسکیں۔ اور وہ خود اپنے ہاتھوں سے کھا سکیں۔ اس پر جو کھانا پورا اُترتا ہے اسے فنگر فوڈز کہا جاتا ہے۔ جب بچہ چھ سے سات ماہ کا ہوجائے اور وہ چمچہ کو آسانی سے پکڑسکے، تب آپ انہیں فنگرفوڈز کھلانے کا ضرور آغاز کریں۔ابتداء میں یہ غذا نرم ہونی چاہیئے تاکہ اس کے مسوڑھے اس غذا کو آسانی سے چبا سکیں اس کے بعد بچے کو تھوڑی نرم اور سخت غذا کھلائیں۔ آپ بچے کو جو بھی غذا دیں اسے اتنے چھوٹے چھوٹے ٹکڑوں میں کاٹیں اور بنائیں کہ وہ اسے باآسانی پکڑکر کھاسکے۔ ایسے میں کچھ ایسی غذائیں جو بچوں کے جسمانی صحت وتندرستی کے لیے بہترین اور فائدہ مند ہوسکتے ہیں درج ذیل ہیں۔
1۔بغیر بیجوں والاتربوز:۔
تربوز کی غذائی افادیت سے کسی کو انکار نہیں قدرتی طور پر پانی سے بھرپور یہ پھل نہ صرف بڑوں کے لیے فائدہ مند ہوتا ہے بلکہ شیرخوار اور چھوٹے بچوں کی صحت کے لیے بھی بہترین جانا جاتا ہے۔ اس بیج نکلے تربوز کو چھوٹے سلائس کی صورت میں کاٹ کر بھی بچوں کو کھلایا جاسکتا ہے۔
2۔ پاستا:
اُبلے ہوئے پاستا کے چھوٹے چھوٹے ٹکڑے بھی شیرخوار بچوں کی بہترین غذا ہوسکتی ہے۔ پاستا کولیسٹرول فری اور سوڈیم کی کم مقدار لیے ہوئے ہوتا ہے۔ اس لیئے بوائل پاستا میں تھوڑا تیل اور چٹکی بھر نمک ملا کردیا جاسکتا ہے اس کے علاوہ آپ اس میں کچھ پنیر بھی ملاسکتی ہیں۔
3۔ آڑو:
*تین سے نوماہ کے بڑھے بچوں کے لیے نرم گودے سے بھرا آڑو بھی ایک بہترین ابتدائی غذا ہے اس کا چھلکا اُتار کر گودے کو اچھی طرح میش کرکے کھلایا جاسکتا ہے اس سے بچے میں قبض کی شکایت نہیں ہوگی ، اسے میش کرنے کے علاوہ انتہائی چھوٹے چھوٹے ٹکڑوں میں کاٹ کر بھی کھلایا جاسکتا ہے۔
4۔ مرغی :
گوشت کی مختلف اقسام میں چکن بڑوں اور بچوں میں نہ صرف سب سے زیادہ کھایا جاتا ہے بلکہ دنیا بھر میں یہ ہر ایک کا دل پسند کھانا بھی ہے۔ چکن میں پروٹین کا خزانہ موجود ہوتا ہے اس لیے یہ بڑھتے ہوئے بچوں کے مسلز اور ہڈیوں کی مضبوطی کے لیے ضروری سمجھا جاتا ہے۔ چکن کو چھوٹے چھوٹے ٹکڑوں میں نمک ملے پانی میں اُبال کر بچوں کو کھلایا جاسکتا ہے ۔
5۔ آم:
*پھلوں کا بادشاہ آم بھی بچوں کے لیے فائدہ مند غذا ہے ۔ اگر بچوں میں بصارت کے حوالے سے کوئی شکایت ہے تب انہیں آم ضرور کھلانے چاہئیں کیونکہ اس میں پایا جانے والا وٹامن اے آنکھوں کی بینائی کو طاقتور بناتا ہے۔ یہ ٹھنڈ، نزلہ اور زکام سے بھی محفوظ رکھتا ہے۔ اس کا گودا یا چھوٹے ٹکڑوں کی شکل میں کاٹ کر بچوں کو کھلایا جاسکتا ہے۔
6۔ گاجر:
*بچے اور بڑوں کے لیے گاجر کی افادیت سے کسی طور انکار نہیں کیا جاسکتا۔ گاجر وٹامن اے کا خزانہ کہلاتا ہے جو کہ آنکھوں یا بصارت کو قوت عطا کرتا ہے۔ اس کے علاوہ گاجر میں موجود وٹامن سی، فائبر بھی بچوں کے لیے مفید ہے۔ گاجر کو اُبال کر یا پھر بھاپ میں تیار کرکے بچوں کو کھلایا جاسکتا ہے۔
7۔کدو یا لوکی:
چھ ماہ کے بچوں کے لیے کدو، لوکی بھی بہترین غذا ہوتی ہے۔ اس میں موجود وٹامنز اور معدنیات مجموعی طور پر بچوں کی افزائش اور صحت کے لیے بہترین سمجھے جاتے ہیں۔ کیلشیئم، میگنیشیم، آئرن اور پوٹاشیئم کے ساتھ ساتھ اس میں دیگر کئی وٹامنز پائے جاتے ہیں۔ کدو کو اُبال کریا پھر بھاپ میں پکاکر بچوں کو کھلایا جاسکتا ہے۔
8۔ شکر قندی:
*شکرقندی بھی شیر خوار بچوں کی صحت کے لیے اہم تصور کی جاتی ہے۔ اس کا استعمال جسم میں نئے خلیات کو بناتا اور پہلے سے موجود سیل کو تباہ اور خراب ہونے سے بچاتا ہے وٹامن سی اور بی سے بھرپور شکرقندی کو بیک کرکے بچوں کو کھلانا مکمل غذائی افادیت فراہم کرتا ہے۔
9۔ آلو:
آلو کو اُبال کر انہیں میش کرکے بچوں کو کھلانا انتہائی فائدہ مند ہوتا ہے اس کے علاوہ بیک کیا ہوا آلو بھی ذائقہ دار ہوتا ہے لیکن آلو میں کیلوریز کی مقدار بہت زیادہ پائی جاتی ہے اس لیے چھ سے دس ماہ کے بچوں کے لیے اس کی دو سے تین چائے کے چمچہ کی مقدار بہتر ہوتی ہے۔
10۔ سیب:
*سیب ایک ایسا پھل ہے جسے کسی تعارف کی ضرورت نہیں۔اپنی بے شمار غذائی افادیت کی بدولت یہ بہترین پھل کہلاتا ہے۔ ایک درمیانے سائز کے سیب میں نوے کیلوریز موجود ہوتی ہیں۔ اس کے علاوہ سیب کی اسی مقدار میں 5 گرام فائبر اور آئرن پایا جاتا ہے۔ کدوکش کیا سیب بچوں کو کھلایا جاسکتا ہے۔
11۔ انڈے:
اسٹڈی سے یہ بات سامنے آئی ہے کہ انڈے کھانے سے کولیسٹرول لیول کم ہوتا ہے۔ اس میں آئرن، پروٹین، منرلز اور دیگر وٹامن کے ساتھ ساتھ وٹامن ڈی پایا جاتا ہے۔ اس لیے انڈوں کو اُبال کر انہیں میش کرکے یا چوپ کرکے بچوں کو کھلایا جاسکتا ہے۔یا اس کے چھوٹے ٹکڑے کر کے بچوں کو کھانے کے لئے دیا جا سکتا ہے۔
12۔ کیلا:
*شیرخوار اور نوزائیدہ بچوں کے لیے کیلا سب سے زیادہ زور ہضم اور نرم غذا ہے چھ ماہ کی عمر کے بچوں کو میش کیا ہوا کیلا کھلایا جاسکتا ہے بچوں کی نشوونما میں کیلے کی اہمیت سے کسی طور انکار نہیں کیا جاسکتا۔ اس میں صحت مند غذائی اجزاء مثلاً پروٹین اور منرلز پائے جاتے ہیں۔
13۔ مچھلی :
سی فوڈز میں مچھلی سب سے زیادہ صحت مند اور افادیت سے بھرپور کہلاتی ہے۔ اس میں شامل اومیگا تھری فیٹی ایسڈ آپ کے بچوں کی ڈائیٹ کے لیے بہترین ہوتا ہے۔ یاد رہے بچوں کو وہ مچھلی دیں جس میں Mercury کی مقدار انتہائی کم ہو اس کے علاوہ بچوں کو انتہائی کم مقدار یعنی ایک سے دو چائے کے چمچ میش کی ہوئی مچھلی کا دیا جاسکتا ہے۔
14۔پنیر:
*پنیر میں شامل غذائی اجزاء بچوں کی صحت کے لیے فائدہ مند سمجھے جاتے ہیں۔ اس میں کیلشیئم، سوڈیم، پوٹاشیئم اور وٹامن ڈی پایا جاتا ہے۔ اس لیے پنیر کے چھوٹے چھوٹے ٹکڑوں کو کاٹ کر یا اسے میش کرکے بچوں کو دیا جاسکتا ہے۔

Image Credits: google

Summary
Article Name
شیر خواربچوں کے لیے 14مزیدار اور صحت بخش فنگرز فوڈز - ایچ ٹی وی اردو
Description
فنگر فوڈ دراصل ایک چھوٹے نوالے یا لقمے جتنا فوڈ جسے چھوٹے اور بڑھتے ہوئے شیرخوار بچے آسانی سے کھا کر ہضم کرسکیں۔ اور وہ خود اپنے ہاتھوں سے کھا سکیں۔ اس پر جو کھانا پورا اُترتا ہے اسے فنگر فوڈ
Author
Publisher Name
htvpk
افشاں مراد

صحافت کے شعبے سے تعلق رکھتی ہیں۔ صحت اور سائنس کے مضامین میں گہری دلچسپی اور سائنسی میدان میں ہونے والی نئی تحقیقات کے مطالعے کا شوق ہے ۔