سوزشِ رحم کی علامات اور علاج

251

جوان اور شادی شدہ خواتین میں رحم کی سوزش یا بچہ دانی کی سوزش اور اینڈومیٹریوسس ایسا مرض ہے جو نہ صرف عورت کی جسمانی صحت پر اثر انداز ہوتا ہے بلکہ نفسانی جذبات کو بری طرح مجروح کرتا ہے۔ اس مرض میں بچہ دانی کی اندرونی غشاؤں یعنی اینڈرومیٹریم کی تہوں کے خلیات یعنی اینڈومیٹریل سیلز میں سوزش ہوجاتی ہے اور یہ خلیات ہر ماہ حیض کے دوران بچہ دانی کی اینڈومیٹریم سے علیحدہ ہوتے رہتے ہیں۔

بچہ دانی کی اینڈومیٹریم سے اترنے والے یہ خلیات دورانِ حیض خون کے زائد دباؤ کی وجہ سے مہبلی رکاوٹ کے باعث بچہ دانی سے خارج ہونے کے بجائے قاذف نالیوں یعنی فلوپین ٹیوبوں کے راستے پیٹ میں پہنچ جاتے ہیں یہاں یہ باریطون پر اور بچہ دانی کے اطراف نزدیکی اعضاء پر چمٹ جاتے ہیں۔ اندرونی اعضاء پر چپکے ہوئے یہ خلیات جنسی ہارمونوں کے زیر اثر اینڈومیٹریم کی طرح ہی اپنے مخصوص افرازی فعل سرانجام دیتے رہتے ہیں اور تقسیمی عمل کے ذریعے اپنی تعداد میں اضافہ کرتے ہوئے پیٹ میں موجود اعضاء پر پھیلتے رہتے ہیں۔

چونکہ یہ مرض صرف بچہ دانی تک محدود نہیں رہتا بلکہ پیٹ میں قریب کے دوسرے اعضاء اس کی گرفت میں آجاتے ہیں اور ناف سے نیچے دونوں اطراف میں موجود اعضاء پر اینڈومیٹریل سیلز پھیل جاتے ہیں اس لیے ان بیمار خلیات کے پھیلاؤ کی وجہ سے اس مرض کو اینڈومیٹریوسس کہاجاتا ہے۔ ایک بار اینڈومیٹریم کے خلیات پیٹ میں داخل ہوجائیں تو انھیں پھیلنے سے روکنا آسان نہیں ہے۔ اسی لیے جو خواتین ایک بارا س مرض میں مبتلا ہوجائیں ان میں مرض بتدریج بڑھتا ہی چلاجاتا ہے۔

علامات

مریض خواتین متاثرہ اعضاء اور شدت مرض کے مطابق مختلف علامات بتاتی ہیں۔ عام علامات میں کمر کے دردکے ساتھ حیض کا اخراج، ہم بستری کے دوران یا بعد میں درد اور بے اولادی شامل ہیں۔ اس مرض میں مبتلا خواتین کمردرد،سردرد،متلی و قے، بلڈ پریشر،تھکاوٹ اور بے چینی وغیرہ کے علاوہ جنسی کمزوری یا حیض کی مقدار اور دورانیوں میں بے ربطی کی شکایت کرتی ہیں۔

شدید علامات میں پیٹ کے نچلے حصے میں بچہ دانی کو مسلتے اور کوٹتے ہوئے چبھن دار درد کبھی پیٹ کے ایک حصے میں یاسارے پیٹ میں یا ریڑھ کی ہڈی تک چلاجاتا ہے اور کبھی مقعد سے رانوں کی طرف پھیلتا ہے،جس کے باعث بعض خواتین ٹانگوں میں اکڑن محسوس کرتی ہیں۔ کئی خواتین کو متلی، قے اور اسہال بھی ہوتے رہتے ہیں۔ حیض شرو ع ہونے سے پہلے درد میں شدت ہوتی ہے جو رفتہ رفتہ کم ہوکر بالکل ختم ہوجاتا ہے۔

مزمن یا کرانک مرض کی صورت میں درد کم وبیش دوروں کے ساتھ ہوتا رہتا ہے۔ اینڈومیٹر یوسس کا پھیلاؤ جس عضو تک پہنچ جائے اس کے مطابق علامات ظاہرہوتی رہتی ہیں۔ مثال کے طورپر مثانہ تک مرض کے پھیلاؤ سے پیشاب کی حاجت اور اخراج کے ساتھ درد اور کبھی پیشاب میں خون کی آمیزش ہوجاتی ہے۔اسہال کی صورت میں مرض مقعد اور بڑی آنت تک پھیل جاتا ہے۔ مریض خواتین تھکن میں مبتلا،چڑچڑی اور شوہروں سے بیزار رہتی ہیں۔ تاہم ہر مریضہ مختلف علامت کی شکایت کرتی ہے۔

اینڈومیٹریوسس کے اسباب

اینڈومیٹریوسس کے کئی اسباب ہیں۔ تحقیقات سے یہ ثابت ہوا ہے کہ جسمانی اعضاء کے طبعی افعال بگڑنے کے ساتھ ساتھ جسم کا دفاعی نظام بھی کمزور پڑ جاتا ہے۔ تاہم یہ باور کیا جارہا ہے کہ اینڈومیٹریوسس کی بیماری میں صرف ایسی خواتین مبتلا ہوتی ہیں جن کا دفاعی نظام کمزور پڑچکا ہو اور یہ بھی دیکھا گیا ہے کہ مریض خواتین کے دفاعی خلیات میں بِیٹا سیلز کی تعداد بڑھ جاتی ہے۔ا س کے ساتھ ہی سائیٹو کائینز اور مددگار خلیات بھی پائے جاتے ہیں جو اینڈومیٹریل سیلز کی افزائش کرتے ہوئے انھیں پھیلنے میں مدد فراہم کرتے ہیں۔

علاج

جدید طبی سہولیات یا ایلو پیتھک سسٹم میں اینڈومیٹریوسس کے مرض میں مبتلا خواتین کا علاج تین طریقوں سے کیا جاتا ہے۔
۱۔درد کم کرنے والی ادویات کا استعمال
۲۔ہارمونز کا استعمال
۳۔آپریشن کے ذریعے بچہ دانی یا کبھی بچہ دانی کو بیضہ دانیوں سمیت نکال دیا جاتا ہے اور ساتھ ہی اعضاء پر چپکے ہوئے خلیات کی تہوں کوممکنہ حدتک اُتار کر نکال دیاجاتا ہے۔ اصولِ علاج
علاج کا جو بھی طریقہ اپنایا جائے مریضہ کی عمر،مرض کی علامات، اس کی صحت، اور اولاد کی ضرورت کو مدنظر رکھتے ہوئے اس کی برداشت کے مطابق فیصلہ کرنا چاہیے۔ علاج کے نتائج کا دارومدار درست فیصلہ کرنے پر منحصر ہے۔ ہر طریقہ علاج سے علامات خصوصاً درد کی شدت میں کمی آجانے کے بعد دوبارہ سے درد شروع ہوجانے کے امکانات برقرار رہتے ہیں۔ بے اولاد خواتین کے لیے اولاد کا حصول نہایت اہم ہے۔ اس لیے علاج کا ایسا طریقہ اپنایا جائے جس سے اولاد حاصل کرنے میں رکاوٹ کے امکانات کم سے کم ہوں اور انھیں اولاد کے قابل بنانے کی کوشش کی جائے۔کسی بھی دوائی طریقہ علاج سے مرض پر قابو نہ پایا جاسکے تو آپریشن کا طریقہ اپنایا جاتا ہے۔

 

تبصرے
Loading...

Connection Information

To perform the requested action, WordPress needs to access your web server. Please enter your FTP credentials to proceed. If you do not remember your credentials, you should contact your web host.

Connection Type